یہ کیسا ستمگر اشارہ ہوا ہے

(شفقت عاصمی)
(۱)
یہ کیسا ستمگر اشارہ ہوا ہے
بہاروں میں گُل سے کنارا ہوا ہے

اے جانِ جہاں خوف کا ہے یہ عالم
ترے بِن بھی رہنا گوارا ہوا ہے

یہ ہر سُو خموشی یہ تنہائی ، وحشت
سفر بے بسی کا ستارا ہوا ہے

کہ نوچا ہے فطرت کو انساں نے بے حد
اسی واسطے تو خسارہ ہوا ہے

کہ ہے آسماں ، دھرتی سب کے برابر
سمجھ لو ، اشارہ دوبارا ہوا ہے

نئی سوچ ہوگی ، نیا دور ہوگا
یہ اُمید اپنا سہارا ہوا ہے

اگر بچ گئے عاصمیؔ اس وبا سے
نیا اک جہاں پھر ہمارا ہوا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۲)
نگر حادثہ ہے ، ڈگر حادثہ ہے
یہاں زندگی کا سفر حادثہ ہے

سمجھ لو ! وبا کے دنوں کی کہانی
اِدھر حادثہ ہے ، اُدھر حادثہ ہے

رہو گھر میں اپنے حفاظت سے اب تم
کہ ہر اک یہاں رہ گزر حادثہ ہے

لِکھوں کیسے اب میں وبا کا فسانہ
کہ زیر و زبر ، ہر سطر حادثہ ہے

ملیں گے تجھے پھر کسی دن ’’ گواڑخ ‘‘
یہ دوری فقط بے ضرر حادثہ ہے

یہ شر کی شرارت سِوا کچھ نہیں ہے
رہو دور ان سے ’’ خبر ‘‘ حادثہ ہے

حوادث کا اپنا سفر ہے یہاں پر
گزر جائے گا ، یہ اگر حادثہ ہے

یہ دنیا بہت خوبصورت ہے شفقتؔ
یہ جینا ، یہ مرنا ، مگر حادثہ ہے

( ’’ گواڑخ ‘‘ بلوچستان کے پہاڑوں میں قدرتی طور پر اُگنے والے پھول کا براہوئی نام )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۳)

یہ کیسی بھیانک ، ستمگر وبا ہے
سمجھ میں نہ آئے سزا ہے ، خطا ہے ؟

ہر اک سانس اٹکی ہوئی پھانس جیسی
سلیٹی سی چادر میں سہمی فضا ہے

ترے روپ چہروں سے دوری رہے یوں
بڑی سخت مولا ! یہ میری سزا ہے

کوئی ابر رحمت ، کوئی ایسی بارش
چھٹے خوف کی اب یہ کالی گھٹا ہے

کہیں مر نی جائیں یہ خوابوں کے پنچھی
سمّے نے جو اوڑھی قفس کی ردا ہے

کوئی روشنی کا ستارا خدارا !
اندھیرے نے نگلا ہر اک راستہ ہے

بُھلا بیٹھا مولا ! اٹل مَیں حقیقت
یہ جیون تری سب سے اعلیٰ عطا ہے

کوئی گنگناتا مغنی ہو شفقتؔ
خموشی کی چیخیں سزا انتہا ہے ۔

Comments are closed.