مُوذی وبا کرونا نے جھُلسا دیئے چمن

(جاویدؔ ڈینی ایل)

مُوذی وبا کرونا نے جھُلسا دیئے چمن

کس نے خیال و خواب کو پہنا دیا کفن
زخموں سے چور چور ہے لفظوں کا پیرہن

پل میں چراغ دیکھئے کتنے ہوئے ہیں گُل
مُوذی وبا کرونا نے جھُلسا دیئے چمن

اشکوں سے تر ہے صفحہء قرطاس اِس طرح
جیسے صلیب و دار پہ لٹکا ہوا بدن

ہر سُو دِکھائی دیتی ہے اب بھوک ناچتی
سہما ہوا ہے دیر سے سوچوں کا بانکپن

حرف و قلم کی سسکیاں کیسے بیاں کروں
بھیگا ہوا ہے خون میں جاویدؔ ہر سخن

Comments are closed.