اگر کرونا سے چاھیں نجات کی صورت

(بشریٰ فرخ )

اگر کرونا سی چاٶنجات دی صورت

نہ ہتھ سی جانڑیں دیو احتیاط دی صورت

او دل کدی بی نی کہبراندے آزمائش سی

”امیدِزیست“جتھے وے ثبات دی صورت

چراغِ عزم کسی موڑ تے بجھا نہ سکے

ہنیرے جد بی ملے کالی رات دی صورت

سپاھی فوجی رضاکار ڈاکٹر جو بی

کھلوتے سامڑیں یومِ نجات دی صورت

جو اپنوں پہل کے کرن قوم دی مسیحائ

او خلق واسے فرشتے نیں ذات دی صورت

ونڈانڑیں والے اے مل جل کے دکھ تے درداں دے

بدل دتی اناں نیں کائنات دی صورت

نبھانڑیں والے فرائض نوں عزم و ھمت نل

ایہی نے چاروں طرف شش جہات دی صورت

سلام کردی اے بشریٰ اناں دی عظمت نوں

جناں دی پرورش اعلیٰ صفات دی صورت

———————
ترجمہ

اگر کرونا سے چاھیں نجات کی صورت

نہ جانے ہاتھ سے دیں احتیاط کی صورت

وہ دل کبھی نہیں گبھراتے آزمائش سے

”امیدِذیست“جہاں ھے ثبات کی صورت

چراغِ عزم کسی موڑ پر بجھا نہ سکے

اندھیرے جب بھی ملے کالی رات کی صورت

سپاھی فوجی رضاکار ڈاکٹر سارے

کھڑے ھیں سامنے یومِ نجات کی صورت

جو خود کو بھول گۓ خلقتِ خدا کے لیۓ

تو خلق کو وہ فرشتے ھیں ذات کی صورت

جو بانٹ لیتے ھیں مل جل کے سارے درد تو پھر

بدل سی جاتی ھے اس

کائنات کی صورت

نبھانے والے فرائض کو عزم و ھمت سے

رھیں گے دل میں سدا شش جہات کی صورت

سلام کرتے ھیں بشریٰ ہم انکی عظمت کو

ھے جنکی پرورش اعلیٰ صفات کی صورت

Comments are closed.