عزم

(ڈاکٹر شاھدہ سردار)

نشاطِ فتح سے خالی نہیں دامن ابھی میرا…..
اگر چہ زندگی دشوار رستوں پر پریشاں ھے…
اگر چہ زندگی اسیر ھو کر رہ گئی ھر سمت…….
اگر چہ دشت کی خاموشیاں دل کو رولاتی ھیں…
زمیں چُپ ھے فلک ھے چُپ…
ھوا چُپ ھے فضائیں چُپ…..
سکوت مرگ میں ڈوبی ھوئی دنیا کی خاموشی…
کہ زندہ چل رہی ھے زندگی دست بستہ لب بستہ….
متاع جاں کے کھونے پر پریشاں روح بھی چُپ ھے……
مگر صد شکر کہ باسی ھیں ایسی سر زمیں کے ھم…..
چراغ فکر سے روشن رہے ھیں زہن و دل جن کے…
مکیں ایسی زمیں کے ھیں کہ جن کو ناز ھے خود پر…..
اندھیروں کو ضو میں جو بدل دیتے ھیں پل بھر میں…
نہیں خالی زمیں میری ابھی ایسے فرشتوں سے…
نہیں خالی زمیں میری ابھی ایسے سپوتوں سے……

کہ ھے دستِ ہنر میں جن کی ساری قوتوں کے رنگ……
جو عزم و حوصلہ لے کر…
چراغ جاں بچانے کو ہر اک طوفاں سے لڑ جائیں……
زیاں سود و کدورت کو بُھلا کر سب…
درخشاں صبح نو کی آرزو رکھیں………
سلام اے قوم کے سارے مسیحاؤں سپوتوں پر…
سلام اے پیکر انسانیت تیری محبت پر….
دعا ھے اے خدا تجھ کو گراں کچھ بھی نہیں ھے…
دلوں میں ولولے جذبے محبت کے سدا رکھنا…..
ھمارے عزم کو غم ہاے دنیا سے جُدا رکھنا……

Comments are closed.