تاج دار و بے نشاں جنت نشاں ہونے کو ہیں

(سید نواب حیدر نقوی)

کو رونا کے نام

تاج دار و بے نشاں جنت نشاں ہونے کو ہیں
کیا کریں زیر و زبر کون و مکاں ہونے کو ہیں

غیر مرئی شے نے سب کا جینا دو بھر کر دیا
ایسا لگتا ہے مکاں بھی لا مکاں ہونے کو ہیں

رہ گزار شوق پر ویرانیاں ہیں خیمہ زن
رستی بستی بستیاں بھی رفتگاں ہونے کو ہیں

زندگی اور موت کے اور رزق کے یہ مسئلے
دیکھئے تحلیل کیسے اور کہاں ہونے کو ہیں

داستاں لودے رہی تھی جن کی بزم شوق میں
نامور وہ داستاں در داستاں ہونے کو ہیں

کاروان زیست ہے انجانی راہوں پر رواں
حادثے کیا کیا نصیب دشمناں ہونے کو ہیں

جس طرح ممکن ہو راہی کار دنیا کیجیے
دیکھیے رستے یہ کب تک گلستاں ہونے کو ہیں

Comments are closed.