میرے مالک میرے مولا

(ڈاکٹر محمد اشرف کمال)

میڈے مالک میڈے مولا
اساں تیڈے او عاجز بندے ہیں
جیڑھے حد توں ودھ کے بے بس ہیں
ساڈے سر تے غم دے ڈھیربہوں
اساں رو رو منتاں منگدے ہاں
ساڈا حال وی چنگا تھیوے ہا
ساڈی سوچاں لیرو لیر تھئیاں
پئے جندرے ساڈے ذہناں تے
ساڈا حال بہوں ای پتلا ہے
ساکوں روز کرونا کھاندا ہے
اساں مر ویسوں اساں گل ویسوں
ساکوں رول نہ توں او رب سونہڑاں
ساڈی قسمت دی گنڈھ کھولیں ہا
ساکوں ڈھیر دعاواں آندیاں نئیں
ساڈے ہتھ وی خالی ہن مولا
ساڈے سکے اُکے کھوٹے ہن
ساڈی جان چھڑاویں ہا مولا
ساڈے دشمن موذی مرضاں توں
ساڈے ہتھ ڈے ایندی نبضاں کوں
ساکوں آپ بچاویں ہا مولا
ساکوں ایڈا نہ ازما مولا
ساڈے شہراں تے
ساڈے گوٹھاں تے
ہر بندے تے ہر وستی تے
توں آپ کرم فرما مولا
اونھ رحمت آلے دے صدقے
اونھ کملی والے دے صدقے

اردو ترجمہ۔۔۔
نظم۔۔ کرونا۔۔۔
میرے مالک میرے مولا
ہم تیرے وہ عاجز بندے ہیں
جو حد سے بڑھ کے بے بس ہیں
سر پہ غموں کا بوجھ ہے جن کے
رو رو منتیں مانگ رہے ہیں
حال اپنا اچھا ہوجائے
سوچ ہماری ریزہ ریزہ
قفل پڑے ہیں سب ذہنوں پر
اپنا حال بہت نازک ہے
ہم کو روز کرونا کھاتا ہے
ہم مر جائیں گل جائیں گے
رل جائیں گے ہم رستے میں
سن لے میری میرے مولا
کھول دے قسمت کی سب گرہیں
اتنی دعائیں آتی نہیں ہیں
دستِ دعا ہے خالی اپنا
اپنے سکے کھوٹے سارے
سب کی جان چھڑا دے مولا
ہر دشمن سے موذی وبا سے
ہاتھ میں دے دے اس کی نبضیں
تو ہی بچانے والا اس سے
لڑ لڑ کر ہم ہار گئے ہیں
رحم ہمارے سب ملکوں پر
سب شہروں پر
سب قصبوں پر
ہر بندے اور ہر بستی پر
تو ہی کرم فرما مولا
اس رحمت والے کے صدقے
اس کملی والے کے صدقے

Comments are closed.