ابابیلوں نے ھاتھیوں کو مار ڈالا

(ثمينه قادر)

{{ واٸرس کرونا انسانان وژلي }}
دی توته کرکو هم ہاتھیان وژلی
د ی مظلومانو قاهران وژلی
اے د انصاف پہ کرسئے ناستہ ربہ
تا پہ کمزورو دی غټان وژلی
نن په نړئیې. یوه وباء خوره ده
وائرس کرونا انسانان وژلی
اول به وصل ته لیواله وومه
اوس می د زړہ واړۂ ارمان وژلی
نن چه آذان تہ غوږ نیولې شومه
د موذن آواز څه داڅې راغلو
مانځه له راشئې چه فلاح اومومئی
ددې اواز سره می زړه اوژړل
بیا می لاس پورته په ژړا می اووے
څنګ د فلاح لارې له درشمه زه
ستا په لور څنګه قدم پورته کړمه
څنګ د صلاہ دپاره درشمه زه
ربه جمات ته ئے جرندې وهلی
مونږ اوس په کور د جمعے مونځ کوو
ته ئے قبول کړے قبلونکی ربہ
سترګې می پورته د آسمان په لور کړے
نن په فضاء کښ د ژوند نښه نیشتہ
یو خاموشی پہ فضاء ھم خورہ دہ
لکه طوفان چی وی مارغان وژلی
د خپل وجود کورته می سر دننه کړو
زړه می میشتہ ټول شیطانان وژلی
کچکول د سوال می دے نیولے درته
د امید پړې به پرے نہ ږدم چرته
ته ئے رحیم کریم عافی شافی ئے
زہ طلبګاره یم دعفوے ربہ
زہ شفاء غواړم اے شافی ربہ
تا ته متازه یو پریشانہ یو مونګ
ژولئې مو ‌ډکه په عطا کړه ربه
او دے چاپیره انسانانو ته هم
د ژوند سرہ نصیب شفاء کړه ربه
سر په سجده درنہ زہ سوال کومہ
قبوله تہ می دا دُعا کړہ ربہ

ابابیلوں نے ھاتھیوں کو مار ڈالا (سورۂ فیل کا ذکر )
مظلوموں نے قاہروں کو مار ڈالا
اے انصاف کی کُرسی پر تشریف فرما رب
تو ناتوانوں کی طاقت بنا اور ظالم طاقتوروں کو مارڈالا
آج پوری دنیا میں جو وباء پھیلی ھے
کرونا وائرس اس نے انسانوں کو مار ڈالا
پہلے میں وصل کے لئے بےچین رھتی تھی
لیکن اب میں نے
(سوشل ڈسٹینس کی وجہ سے )
دل کے تمام ارمانوں کو مار ڈالا
آج آذان کی آواز سن کر میں بہت روئی بہت بےچین ھو گئی
جب موذن نے صلاہ اور فلاح کے لئے بلایا
تو میں نے ھاتھ پھیلا کر روتے ھوئے کہا
“میں کیسے صلاہ کے لئے حاضر ھو سکتی ھوں مسجدوں کو تو تالے لگے ھوۓ ھیں “
اب ھم گھروں میں باجماعت نماز ادا کرتے ھیں قبول کرنے والے تو اسے قبول فرما
آنکھ اُٹھا کر آسماں کی جانب دیکھا فضاء میں بھی زندگی کے آثار نہیں زندگی کی علامت نہیں فضاء پر ہر سو ایک خاموشی پھیلی ھے جیسے تمام پرندوں کو کسی طوفان نے مار ڈالا ھو
میں نے اپنے وجود کے گھروندے میں جھانکا میرے دل نے وجود کے رہائشی تمام شیطانوں کو مار ڈالا ھے
اُمید کی رسی کو مضبوط پکڑ کر
ہاتھ میں کشکول لئے
میرے مالک میں تجھ سے رحم کی بھیک مانگ رھی ھوں
کہ تو رحیم ھے کریم ھے عافی ھے شافی ھے میں معافی کی طلبگار ھوں تو ھی بخشنے والا عفو و درگزر کرنے والا رب
میں شفاء مانگتی ھوں اور تو ھی شافی ھے
ھم پریشان ھیں تیرے در پر
ھم محتاج ھیں تیرے در کے
ھماری جھولیاں اپنی عطا سے بھر دے مولا
اور دنیا کے تمام انسانوں کو شفاء اور زندگی دے
میں سوالی سر بسجود ھوکر تجھ سے سوال کرتی
ھوں
اے میرے رب میری دعا کو تو قبول کر دے

Comments are closed.