اپنے گھر سے وطن سے وفا کیجئے

(جاویدؔ ڈینی ایل)

اپنے گھر سے وطن سے وفا کیجئے
اَمن ہو قریہ قریہ دُعا کیجئے

جس سے مٹنے لگیں نفرتیں چار سُو
کام کوئی تو ایسا نیا کیجئے

پھول کلیاں سبھی مسکراتی رہیں
پیدا ایسی وطن میں فضا کیجئے

درس دیتے ہیں اِنجیل و قرآں یہی
آدمی ہو تو سب کا بھلا کیجئے

اے مرے حکمراں! تجھ سے ہے التجا
بے گنہ سب پرندے رہا کیجئے

چھوڑ کر کوئی جائے نہ اِس دیس کو
کوئی تدبیر ایسی کیا کیجئے

اب تو جاوید! بس کچھ سُنا کیجئے
کچھ لکھا کیجئے، کچھ کہا کیجئے

Comments are closed.