چشم و مژگان و رخ ِ یار سے لگ کر بیٹھیں

(اشرف یوسفی)

وبا کے دنوں میں لکھی ہوئی ایک غزل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چشم و مژگان و رخ ِ یار سے لگ کر بیٹھیں
اہل ِدل جتنے ہیں دیوار سے لگ کر بیٹھیں

موت کرتی ہے طواف آج گلی کوچوں کا
ساری یادیں دل ِ بیمار سے لگ کر بیٹھیں

زلف کچھ روز سمٹ کر رہے اس شانے تک
پھول سب ان لب و رخسار سے لگ کر بیٹھیں

چیختی پھرتی ہے اس دشت کی مسموم ہوا
سب پرندے تن ِ اشجار سے لگ کر بیٹھیں

صبح ہونے میں ابھی دیر لگے گی شاید
مہ وشاں طاق ِ شب ِ تار سے لگ کر بیٹھیں

جانے کس پر ہو کرم کون بچے کس کے طفیل
آج مومن سبھی کفار سے لگ کر بیٹھیں

نہیں پابند خطاؤں کی عطائیں اس کی
نیک جتنے ہیں گنہگار سے لگ کر بیٹھیں

آپ بھی بیٹھ رہیں یوسفی صاحب اک سمت
در سے یا روزن ِ دیوار سے لگ کر بیٹھیں

Comments are closed.