خیال نہ پتھروں سے ڈرتا ہے

(جاويد خيال)

خيآل د سنګ نه نۀ يريږم / خیال نہ پتھروں سے ڈرتا ہے
خيآل د جنګ نه نۀ يريږم / خیال نہ جنگوں سے ڈرتا ہے
بس زما خوږه مالکه / بس اے میرے پیارے مالک
دا سپرلې او ښکلاګانې / یہ بہار اور یہ خوبصورتی
دا مستۍ او خنداګانې / یہ مستیاں او یہ موجیں
دا شينکے او سره ګلونه / یہ سبزہ اور یہ سرخ پھول
دا موسم او بارانونه / یہ موسم اور یہ بارشیں
هر يو کس پسې کړيږي / ہر شخص ان کیلٗے ترستا ہیں
ټول روان دي او ختميږې / جو کہ سارے ختم ہو رہے ہیں
ډېر اوږده بحثونه نۀ کوم / میں لمبی بحثیں نہیں کرتا
د خپل ځان سوالونه نۀ کوم / اپنے لیٗے بھی سوال نہیں کرتا
بس پوره دا مدَعا کړه / بس میری یہ مدعا پوری کر
مونږه خلاص د دې بلا کړه / ہمیں اس بلا سے نجات دے
خدايا خدايا زماخدايا / اے خدا اے خدا ا ے میرے خدا
خدايا ختمه دا وبا کړه / اے اللہ یہ وبا ختم کر

Comments are closed.