اس قدر خوف ہے دنیا میں وبا کا دیکھو

(شگفتہ شفیق)

اس قدر خوف ہے دنیا میں وبا کا دیکھو
اب کہا ں دل کی کوئی بات سنی جاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب تو آہٹ سے مری نیند اڑی جاتی ہے
اتنی وحشت ہے کہ ہر سانس رکی جاتی ہے

دور بیٹھے ہوئے بچو ں کا خیال آتا ہے
جاگتی آنکھو ں ہی میں رات کٹی جاتی ہے

خوف و دہشت ہے خموشی کا ہے عالم ہر سو
دل کی دنیا تو مری آج لٹی جاتی ہے

اس قدر خو ف ہے دنیا میں وبا کا دیکھو
اب کہا ں دل کی کوئی بات سنی جاتی ہے

کوئی بھی کام کہا ں مجھ سے کیا جا ئے گا
شاعری بھی کہا ں ایسے میں لکھی جاتی ہے

پڑی مشکل تو رہا ساتھ مرے فضل – خدا
زیست تو بوڑھے کی مانند تھکی جاتی ہے

یہ بتایا ہے شگفتہ نے اسے رک رک کے
دل کی یہ بات ہے جو پیار سے کی جاتی ہے

ہار جائے گا کرونا پھول پھر کھل جائیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک بلائے آسمانی سب جہا ں پہ چھا گئی
چین سے ہو کے شروع اب وہ یہاں تک آگئی

اس بلائے ناگہانی کو ڈرانا ہے ہمیں
اپنی ہمت حوصلہ اب آزمانا ہے ہمیں

ویسے تو گھر میں ہمیں یو ں بیٹھنا آتا نہیں
گھو منا لگتا ہے اچھا ، گھر تو کچھ بھاتا نہیں

لیکن پیارے دوستو ! یہ بات میری مان لو
عزم و ہمت حوصلے کی ہے ضروت جان لو

کر لو کچھ ا حساس اپنا ، اب خدا کا نام لو
گڑ گڑاؤ ، روتے جاؤ ، رب کا دامن تھام لو

یہ کرونا چیز کیا ہے دل میں جب ہم ٹھان لیں
فا صلہ رکھیں سما جی ، احتیاطیں مان لیں

ہار جائے گا کرونا پھول پھر کھل جائیں گے
یہ جہا ں ہو گا شگفتہ دل سے دل مل جائیں گے

Comments are closed.