اتنا سننے میں آیا کہ اس گاؤں میں چند بادل گۓ

(حنا عنبرین)

Itna sun’ny main aya k us ga’on main chand badal ga’ay
Gal ga’een khaitiyan or bachon k hissay k chawal gay

Kab khazaan aa gai , barg o gul k ranga rang anchal gay
Kitny narmal gay , kitny komal gay or mukammal gay

Aik aasaib tha us hawaili main koi na tha dosra
Qahqahy gonjny lag gay jb wahan chand pagal gay

Shahr par in dino aisi barish ki koi zarorat na thi
Jis sy ghaly khari fasl ki baaliyon main pary gal gay

Kitni sadyon sy dil k makano’n main thi bay baha teergi
Kis k pa’on pary k hazaron di’ay khud bakhud jal gay

Sidrat ul muntaha tak faqat taab thi is sy aagy na thi
Is sy aagay farishton k par qeemti thy magar jal gay

Kia zarorat thi jo lay gai dasht main qais ko awalee’n
Or phir saf ba saf sary usshaq bhi janib e thal gay

Khak kis ny tumhari ra’onat py daali takabur garoo!
Kis ny dhutkara tum ko bas ik aan main sary kas bal gay

Kis ny dunya k taqat waron k dimaghon sy nochy nashay
Kon paishaniyon par siyahi ki loo aan kar mal gay

Ghaflaton main paron par achanak muhammad ki nisbat khuli
Lab sy salay ala jb kaha saray khatraat phir tal gay

Hina Ambreen

——————–

اتنا سننے میں آیا کہ اس گاؤں میں چند بادل گۓ
گل گئیں کھیتیاں اوربچوں کے حصے کےچاول گۓ

کب خزاں آ گئ، برگ و گل کے رنگا رنگ آنچل گۓ
کتنے نرمل گۓ , کتنے کومل گۓ اور مکمل گۓ

ایک آسیب تھا اس حویلی میں کوئ نہ تھا دوسرا
قہقہے گونجنے لگ گۓ جب وہاں چند پاگل گۓ

شہر پر ان دنوں ایسی بارش کی کوئ ضرورت نہ تھی
جس سے غلے کھڑی فصل کی بالیوں میں پڑے گل گۓ

کتنی صدیوں سے دل کے مکانوں میں تھی بے بہا تیرگی
کس کے پاؤں پڑے کہ ہزاروں دیے خود بخود جل گۓ

سدرۃ المنتھی تک فقط تاب تھی اس سے آگے نہ تھی
اس سے آگے فرشتوں کے پر قیمتی تھے مگر جل گۓ

کیا ضرورت تھی جو لے گئی دشت میں قیس کو اوّلیں
اور پھر صف بہ صف سارے عشاق بھی جانب ِ تھل گۓ

خاک کس نے تمہاری رعونت پہ ڈالی تکبر گرو !
کس نے دھتکارا تم کو بس اک آن میں سارےکس بل گۓ

کس نے دنیا کے طاقتوروں کے دماغوں سے نوچے نشے
کون پیشانیوں پہ سیاہی کی لو آن کر مَل گۓ

غفلتوں میں پڑوں پر اچانک محمد کی نسبت کھلی
لب سے صل علی جب کہا سارے خطرات پھر ٹل گۓ

Comments are closed.