میں’’کرونا ‘‘ کا بھی کب وہم و گماں رکھتا ہوں

(یو نس مجاز)

میں’’کرونا ‘‘ کا بھی کب وہم و گماں رکھتا ہوں
کہ پڑا ہو یہ وہاںہاتھ جہاں رکھتا ہوں
کب کہاں پر یہ لپٹ جائے ’’کرونا ‘‘مجھ سے
دشمنِ جاں کی بھی پہچان کہاں رکھتا ہوں
تو تو خالق بھی ہے مالک بھی زمانے بھر کا
میں ترا بندہ ہوں پھر سودو زیاں رکھتا ہوں
میں گنا جاتا محمدﷺکے غلاموں میں ہوں
سر پہ میں سایہ ئِ رحمت ، دوجہاں رکھتا ہوں
میں ’’کرونا ‘‘سے نہیںڈرتا مجاز ایسے ہی
ہر گھڑی نامِ خدا وردِ زباں سے رکھتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

درودِ پاک ﷺہو وردِ زباں جیئے جائیں
’’دعا کے دن ہیں مسلسل دعا کیئے جائیں ‘‘
سبب عذابِ خدا کچھ تو ہو گا یار و پھر
گھروں میں قید ہو ا عمال بھی گنے جائیں
’’کرونا ‘‘سے تو بچاوٗ کا ا ک طریقہ ہے
ہر اک سے دو ر رہیں فاصلے کیئے جائیں
یہ بھی خیال رہے ابتلا کے عالم میں
رہے نہ کوئی بھی بھوکا یہ دیکھتے جائیں
خدا یا بخش ہمارے سبھی گناہوں کو
مجاز ـؔ رو کے خدا سے دعا کیئے جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو شعر
نبیﷺ کے نام کا سکہ جہاں میں چلتا ہے
حضورﷺ ہی کی دعا سے عذاب ٹلتا ہے
کوئی بھی شے اسے نقصان پھر نہیں دیتی
درود پڑھ کے جو گھر سے کوئی نکلتا ہے

Comments are closed.