دجال کے سر کا صدقہ

(سید صدیق اکبر رضا هوتي)

د دجال د سر خېرات

دا د انسان په زندګۍ راخـــــوره شـــــوې وبا

چې سړيتوب ترېنه نن پوزې له راغلے ښکاري

دا د اټـــلي د خـــوشحالـــــــو او زندګۍ قاتله

چې د بنــدیانو نه ئې سم لکه خشاک جوړ کړے

د مرګ بټۍ ګرمه ده سوزي په کښې صرف بندیان

یو خوا د چين په مرۍ ناسته ده د مرګ خپسه

د ورميږونو تا وهــــلو باندې ســــــتړې نۀ شوه

بلها د کار کــــپرۍ لاړې دے سېلاب لاهو کړې

بل خوا ايران کښې د لاشونو امبارونه وينو

بلها ســــــرونه دې بلا په خــــلۀ ورننباسل

بلها کــــورونه سپېرۀ پاتې پرې سيلۍ الوځي

دغه شان سپېن دے او کۀ روس دواړه په ځان اخته دي

د دواړو خلق د کرونا په ګولـــو غلبېل شول

زما وطن هم لوندې خټې دي دروغ نۀ وايم

لږې ابۀ ئې بهانه وي چې حالات خراب شي

څۀ د غربت کرونا اووژل دا خلق دلــــــته

څۀ د یارانو د دې زهرو د تحفو فضل دے

په ګوټ کښې ناست یو د بچو او ځان خېرونه غواړو

ژوند لکه لاش پروت دے د ړک وهلو توان نۀ لري

امکاني ویره د اولس په تصور خوره ده

قانون لګیا دے په ګوټونو ننباسي خلق

د یو وجود د بل وجود نه فاصله جوړه ده

لکه سرجن هر یو بنده ده پټه کړې پوزه

هېڅ پته نۀ لګي چې دا پېریان له کومې راځي

د زندګۍ په کور ډاکه د بربادۍ غورځوي

د دې وطن خلق منم چې فرېښتې نۀ دي خو

چرته نړۍ کښې ئې په چا زهر وېشلې نۀ دي

د دې وطن خلق منم چې فرېښتې نۀ دي خو

د چا اذاده اذادي ئې غصب کړې نۀ ده

د چا په کور کښې ئې د شر ګيټۍ ور ويشتې نۀ ده

شرم پکار دے رضا دغه شان سوچونو له نن

چې په ساګانو باندې دا قسم له زهر وېشي

شرم پکار دے ټول د امن دعویٰٰ دارو له نن

چې د دجال د سر خېرات په انسانانو وېشي

دجال کے سر کا صدقہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ انسانوں کے زندگی پہ چھائی وبا

جس نے آدمیت کے ناک میں دم کر دیا ہے

یہ اٹلی کے زندگی اور خوشیوں کی قاتل

جس نے بندوں کو ایندھن بنا دیا ہے

جو موت کی تپتی بھٹی میں جھلس گئے ہیں

ایک ،اور، چین کے گلے میں موت کا پھندا

جو گردنیں مروڑنے سے تھکا نہیں ہے

بہت سے دیدہ ور لوگ سیلاب میں بہ گئے

دوسری طرف ایران میں لاشوں کے دکھتے انبار

ڈھیر سارے لوگ اس بلا نے نگل لئے

اجاڑ رہ جانے والے مکانوں میں ھوا سرسراتی ہے

ایسے ہی روس اور سپین کو جان کے لالے ہیں

دونوں کے باسیوں کے بدن

کرونا کے گولیوں سے چھلنی ہیں

جھوٹ نہیں بولتا، میرا وطن بھی

گیلی مٹی کا گھروندہ ہے

ذرا سا حیلہ کافی

جب حالات خراب ہوتے ہیں

کچھ لوگوں کو یہاں غربت کے کورونا نے مار ڈالا

کچھ یاروں کے زھریلے تحفوں کا فیض ہے

کونے میں بیٹھے ہم

بچوں اور جان کی خیر مانگ رہے ہے

زندگی لاش کی صورت ہلنے کی سکت سے محروم ہے

امکانی خوف قوم کے تصور پر حاوی ہے

قانون لوگوں کو بلوں میں گھسانے میں مگن ہے

ایک وجود کا دوسرے وجود سے

فاصلہ بنا ہوا ہے

سرجن کی طرح ہر بندے نے ناک چھپائی ہوئی ہے

پتہ نہیں لگتا

کہ یہ جنات کہاں سے آئے

جو زندگی کے گھر پہ بربادی کا ڈاکہ ڈالتے ہیں

میرے وطن کے لوگ

مانتا ہوں کہ فرشتے نہیں لیکن

دنیا میں کہیں کسی کو زھر نہیں بانٹتے

اس وطن کے لوگ

مانتا ہوں کہ فرشتے نہیں لیکن

کسی کی آزادی کو غضب نہیں کیا

کسی کے گھر میں

شر کے پتھر نہیں پھینکے ہیں

شرم آنی چاہئے رضا ایسی سوچوں کو

جو سانسوں میں اس طرح کا ذھر گھولتے ہیں

شرم چاہئے

امن کے سارے ٹھیکے دارو کو آج

جو دجال کے سر کا صدقہ

انسانوں پہ بانٹتے ہیں

انسانوں کو بانٹتے ہیں

ترجمہ ٓ طیب اللہ خان

Comments are closed.