احساس

(ڈاکٹر شاھدہ سردار)

دیکھتی ھیں حسرتیں میری در و دیوار کو…
جانے یہ کیسی وباء ھے کھا گئی سنسار کو….
اب تو سائے سے اپنے ڈر رہی ھے زندگی…..
درد میں ڈوبی ہوئی شرمندگی ھے پیار کو…..
سبز موسم زائقہ اپنا بھلا بیٹھا ھے آج… ..
پھوٹ کر روتے نہ دیکھا تھا کبھی گلزار کو….
تیرگی میں بٹ گئیں دنیا کی ساری رونقیں…
دیکھتی ھوں چار سو پھیلی دکھوں کی ڈار کو…
اب دعاؤں کے سوا چارہ کوئی ممکن نہیں….
معاف کر دے اے خُدا اس بندہ ء لاچار کو…..
تو محبت کا خزینہ ھے اُمید و آس تو…….
بخش دے تابندگیِ جاں دل بیمار کو…….
ھم خطاکاروں سیاہ کاروں کو تجھ پہ ھے یقیں…
رونقیں ساری لوٹا دے گا تو سنسار کو….

Comments are closed.