راشن بنگلوں سرائوں میں پڑا ہے

(سميع سجاد ميراڻي)

راشن بنگلن اوطاقن ۾
غربت گهر جي ٻن طاقن ۾

پيٽ جو دوزخ ڀرڻو آهي
ڪم پيو آ چالاڪن ۾

ھٿيارن جو ڪارج ڪهڙو؟
ڏيھ جي ڏتڙيل ناچاڪن ۾

شھر سڀئي سنسان ٿيا هن
ڀاڄ پئي آ رولاڪن ۾
———————-

ترجمه
راشن بنگلوں سرائوں میں پڑا ہے
غربت گھر کے دو حصوں سے بنے دروازے کے اندر ہے۔
پیٹ کا دوزخ بہرنا ہے پر
چالاک لوگوں سے واسطہ پڑا ہے
ہتہیاروں کا کوٸی کارج نہیں
اس دیس کے بیمار لوگوں میں
سارے شہر سنسان ہیں
آوارا لوگ دوڑ رہے ہیں ..

Comments are closed.