رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم

(عبدالشکور آسی)

رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم.
رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم.

کچھ بھروسہ نہیں اپنے اعمال پر
بار عصیاں سےجھکنے لگا ہے یہ سر.
ہم کہاں جائیں گے تو نہ مانا اگر.
رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم ..

ہم نے پرواہ نہ کی تیرے احکام کی
اور سمجھا نہیں مقصد زندگی .
تیرے محبوب کے ہیں مگر امتی .
رب کعبہ.کرم رب کعبہ کرم .

موت کے ڈر سے ہیں گھر میں محصور ہم
اور مساجد سے بھی ہو کئے دور ہم..
اس سے پہلے نہ تھے اتنے مجبور ہم.
رب کعبہ.کرم رب کعبہ کرم ….

سخت مشکل میں ہیں غم کےمارے ہوے
جن سے امید تھی وہ کنارے ہوئے .
چارہ گر اور مسیحا بچارے ہوئے.
رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم.

ٹال دے سر سے یہ آفت ناگہاں.
اس سےمحفوظ ہو جا ئے سارا جہاں
ہر سعی آدمی کی ہوئی رائگاں.
رب کعبہ کرم رب کعبہ کرم .

Comments are closed.