شعور خیروشر کچھ بھی نہیں ہے

(عبداشکور آسی)

شعور خیروشر کچھ بھی نہیں ہے.

تو پھر پیش نظر کُچھ بھی نہیں ہے.

کدھر جا دہ کدھر منزل کدھر وہ .
مسافر کو خبر کچھ بھی نہیں ہے.

توجہ چاہئے کچھ چارہ گر کی .
ابھی زخم جگر کچھ بھی نہیں ہے.

غلط کہتے ہیں جو کہتے ہیں آسی.
پس شام و سحر کچھ بھی نہیں .

Comments are closed.