کرونا کا ڈر

(نیلما ناھید درانی)

کرونا دا ڈر۔۔۔۔!

کل تک گردن وچ سریا سی
آپے بنے پردھان
آپے اپنے تخت سجاندے
جھوٹھ تے کردے مان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اج او معافی معافی لکھدے
بن گئے نیں انسان
واہ اوئے ربا ! تیری شان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کرونا کا ڈر۔۔۔۔!

کل تک گردن میں سریا تھا ( گردن میں سریا۔۔یعنی غرور )
خود ھی پردھان بنے ھوئے تھے
خود ھی اپنے تخت سجاتے تھے
اور اپنے جھوٹھ پر مان کرتے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
آج وہ اللہ معافی، اللہ معافی لکھ رھے ھیں
اور انسان بن گئے ھیں
واہ میرے اللہ۔۔۔۔۔تیری شان

Comments are closed.