بیوی کی بڑبڑاہٹ

(حمیرہ نور)

ھم
سمجھ رھے تھے کہ
ھمارے حکمرانوں نے
اور
ھماری غیور عوام نے
چین۔ اٹلی۔ ایران ۔امریکا
اور دیگر ممالک سے
اپنے اور اپنے پیاروں کے لٸے
بہت کچھ سیکھا ھوگا
پر نہیں
يهاں تو الٹی گنگا
بہاٸی جا رہی ھے
اس الٹی گنگا کو
لوگ حسرت سے
دیکھ رھے ھیں کہ
دیکہیں یہ گنگا
کٸسے بہتی ھے؟
لاک ڈاٸوں کٸسے لگتا ھے؟
لاک ڈاٸوں میں
کیا کیا ھوتا ھے؟
باھر کیا کیا ملتا ھے؟
فوج اور رینجرز کو
دیکھ کر آتے ھیں کہ
یہ لوگ
ھمارے لوگوں کے ساتھ
کیسا رویہ رکھتے ھیں؟
امداد کہاں کہاں سے ملتی ھے؟
کوٸی ھوٹل کھلی ھوگی تو
چاٸے پی کر
فلم دیکھ کر
اخباری خبرین سن کر
اور گپے مار کر آتے ھیں
اور ہاں
بیوی نے کہا تھا
گھر پے
کھانے کو کچھ بھی نہیں
تو
امداد کا بھی پتہ کرنا ھے
کوں کوں بانٹ رہا ھے
ایک سے لےکر
پھر دوسرے کے پاس جانا
دو تین ماھ کا
راشن مل جاٸے تو
روز روز کی مزدوری
اور
بیوی کی بڑبڑاھٹ سے
جان چھوٹ جاٸے گی
چلو سب دوست
لاک ڈاٸوں دیکھ کر آتے ھیں۔

Comments are closed.