وحشتِ رنج و غم سے بچا اے خُدا

(آفتاب عالم قریشی)

وحشتِ رنج و غم سے بچا اے خُدا
ٹال دُنیا سے ہر اِک بٙلا اے خُدا

پِھر یہاں گُلسِتاں چاہتوں کےکِھلیں
پِھر سبھی ایک دُوجے سے ہنس کر مِلیں
پِھر چلے رحمتوں کی ہٙوا اے خدا
ٹال دنیا سے ہر اِک بٙلااے خُدا

جاری ہوجائے پِھر سے طوافِ حرم
آدمیّت پہ کر اپنا لُطف و کرم
اپنے بندوں سے مٙت ہو خفا اے خُدا
ٹال دُنیا سے ہر اِک بٙلا اے خدا

موت کا رقص جاری ہے جو چار سُو
ختم کردے اِسے اپنی رحمت سے تُو
ہر دُکھی دِل کی ہے اِلتجا اے خدا
ٹال دنیا سے ہر اِک بٙلا اے خدا

زخم دل کے بٙھلا کس کو دِکھلائیں ہم
اپنی فریاد لے کر کہاں جائیں ہم
کون اپنا ہے تیرے سِوا اے خدا
ٹال دنیا سے ہر اِک بٙلا اے خدا

Comments are closed.