موسم ِگُل عجب گُل کھِلانے لگا

(محمدشفیق انصاری)

موسم ِ گُل عجب گُل کھِلانے لگا
میرا محبوب چہرہ چھُپانے لگا
قربتیں خواب ہوکرسبھی رہ گئیں
مِلنا جُلنا تو بالکل ٹھکانے لگا
ہم پہاڑوں سے خائف نہیں ہوسکے
ایک ننّھا سا ذرّہ ڈرانے لگا
غیر محتاط سارے رویّے گئے
ہر کوئی احتیاطیں بتانے لگا
قیدِ تنہائی جس کو دوا میں مِلی
وہ جبیں کو زمیں سے لگانے لگا
ہر معالج محافظ مسیحا بنا
کھیل کر جاں پہ جانیں بچانے لگا
ہم شفیقؔ امتحاں کے دنوں میں ہیں اب
ہم کو پروردگار آزمانے لگا

Comments are closed.