جتنے ہیں بکھیڑے دنیا کے

(یاوؔر اقبال)

جتنے ہیں بکھیڑے دنیا کے
What ever conflicts the world has…

وہ تٌو جانے، بندے تیرے۔۔۔!
You (LORD) and your bondsmen deal with it…

اِن حَشر تپیدہ سڑکوں پر۔۔۔
(For) Over those wailing roads…

بے حرف و زباں حیوانوں کے
Word-less and speechless animals…

دِل پَژمٌردہ ، لَب سوکھے ہیں
Are disheartened and thirsty..

اب قہر اٌٹھا بھی دے ربا !!
Now end this ordeal O’ my Lord!!!!

”مغرب کے پرندے بھوکے ہیں“
The birds of west are starving…

Comments are closed.