اِس شہرِ غم میں

(ذوالفقارعلی خان)

په دے ښار کښې دَ غم

نامعلوم زهر څکم په دے ښار کښې دَ غم
بے ګُناه يم خو مرم په دے ښار کښې دَ غم

هره شپه دَ وباء ديوان اوخوري اُمید
هره ورځ نوے غم په دے ښار کښې دَ غم

بلؤم به ډيوې دَ اُميد اؤ سبا
کۀ هر څو وي تورتم په دے ښار کښې دَ غم

وخته ستا دَ ستم وي تر څو به دوران
دړد تر څو به زغمم په دے ښار کښې دَ غم

دے ترخو له خواږۀ ، دې ژړا له خندا
کوم بازار نه راؤړم په دے ښار کښې دَ غم

نۀ سپرلے نۀ ګلان ، بس خزان او هجران
نۀ ديدن دَ صنم په دے ښار کښې دَ غم

هره ساه په ژړا، هر ساعت کربلا
هره ورځ محرم په دے ښار کښې دَ غم

نۀ حجره نۀ جومات دلته ژوند دے فسات
نۀ رباپ اؤ چيلم په دے ښار کښې دَ غم

هائے کوکار دے هر خوا هر سبا هر بیګاہ
وير ، ژړا اؤ ماتم په دے ښار کښې دَ غم

غوټۍ واړه ستي ، هر يو ګُل دے زخمي
نۀ باران نۀ شبنم په دے ښار کښې دَ غم

خوشحالي اؤ خندا، علی خانه عُنقا
په دے ښار کښې دَ غم ، په دے ښار کښې دَ غم

(ترجمہ)
اِس شہرِ غم میں

نامعلوم زہر پی رہا ہُوں اِس شہرِ غم میں بے گُناہ مر رہا ہُوں اِس شہرِ غم میں

ہررات وباء کے دیو اُمید کو کھا جاتے ہیں ہر روز نیا غم اِس شہرِ غم میں

جلاتا رہونگا اُمید اور سحر کے دیئے ہوں جب تک بھی اندھیرے اِس شہرِ غم میں

اے وقت! تو کب تک اپنا سِتم ڈھاتا رہیگا میں کب تک درد سہتا رہونگا اِس شہرِ غم میں

اِن تلخیوں کیلئے مِٹھاس اور رونے کیلئے مُسکراہٹ کِس بازار سے لاؤں اِس شہرِ غم میں

نہ بہار اور نہ پھول، صِرف خزاں اور ہِجر نہ دیدِ صنم اِس شہرِ غم میں

ہر سانس میں آنسو، ہر لمحہ کربلا ہر دِن مُحرم اِس شہرِ غم میں

نہ حُجرہ، نہ مسجد، یہاں زندگی ہے فساد نہ رباب، نہ حُقہ اِس شہرِ غم میں

ہرصُبح ہر شام، ہر طرف آہ و فغاں رونا دھونا اور ماتم اِس شہرِ غم میں

تمام کلیاں جلی ہوئی، پھول سارے زخمی نہ بارش نہ شبنم اِس شہرِ غم میں

خوشی اور مُسکرانا، علؔی ہوگئیں عُنقا اِس شہرِ غم میں اِس شہرِ غم میں

Comments are closed.