کرونا

(رخشندہ بتول)

اسے قدرت کا تھپڑ ہی سمجھیے
ضمیر ِآدمی جب سو چکا تھا
کسی بھوکے،کسی ننگے،کسی مفلس کی آنکھوں میں چھپی حسرت
نظر میں کب سماتی تھی
یمن میں سسکیاں لیتی ہوئی آدم کی اولادیں
فلسطیں میں تشدد
جبر کی چکی میں پستی وادئ کشمیر ہم سب کو بلاتی تھی
مگر ہم گونگے،بہرے،اندھے بن کر
اپنے ہی خوابوں کی مستی میں
تمناؤں کے دریاؤں میں بہتے جا رہے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسلسل غفلتوں نے ایک جرثومے کی صورت دھار لی ہے
زمیں ساری قرنطینائی خیمہ بن گئی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدائے لم یزل جو کہ نہایت رحم والا ہے
جو ستر ماؤں سے بڑھ کر ہمارا دھیان رکھتا ہے
اسی کا نام ہے قہار اور جبار بھی ، سمجھیں
کہیں ہم بھول بیٹھے ہیں کہ نافرمان اولادوں کو ماں تھپڑ لگاتی ہے۔

Comments are closed.