مقابل آگئی ۔۔۔۔۔۔۔.۔۔۔ظلم وستم کے

(پروفیسر سبین یونس)

مقابل آگئی ۔۔۔۔۔۔۔.۔۔۔ظلم وستم کے

مشیت ایزدی کچھ اس طرح سے

وہ جوہر زورور کے۔۔۔ کیا ہوئے ہیں

خدائی کو بھی جو تھامے ہوئے تھے

کرونا کچھ کہ ہے سب دسترس میں

ہے جاں لینا۔۔۔و۔۔۔دینا بس میں تیرے

بچا پائے نہیں گر۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنا گھر بھی

دھرے رہ جائیں گے طاقت کے دعوے

فقط اتنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یقین رکھنا پڑےگا

کہ ہیں سب ۔۔۔۔۔آزمائش کے کرشمے

کہیں طاقت سے۔۔۔۔ دولت سے نوازا

کہیں پہ امتحاں ہیں۔۔۔۔ بے کسی کے

ہر اک مشکل سے نکلیں سرخرو ہم

اطاعت اور یقیں کی۔۔ طاقتوں سے

تو کر دے بے کسوں کی دستگیری

خدایا! ۔۔۔۔۔ظالموں کو خاک کردے

Comments are closed.