یہ جو تم مسیحا دیکھ رہی ہو نہ سندھی

(سروان سندھی)

ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي!
سرواڻ سنڌي

هيءَ به ڪنهن جي آس آهن،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي،
قوم جو وشواس آهن،
داغ جيڪي تُون ڏسين ٿي،
هيءَ به ڪنهن جي آس آهن،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي.

قافلا جيڪي اچن ٿا،
انت جو اهڃاڻ آهن،
هيءَ انهن جي آجيان لئه،
ساهه جي سُرهاڻ آهن،
زندگيءَ جي ڄاڻ آهن،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي.

هيءَ هوا ۾ ديپ آهن،
رات ۾ جيڪي ٻَرن ٿا،
روشنيءَ جي آرزوءَ ۾،
ٻاٽ سان ڪيڏو وڙهن ٿا،
سانجهه ۾ ڪيڏو سڙن ٿا،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي.

هيءَ وطن جي ويڙهه لاءِ،
آخري ديوار آهن،
ھي سدائين جيت آهن،
ڪير چوندو هار آهن؟!
واٽ تي وڻڪار آهن،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي.

رات جي پوئين پهر ۾،
گهاءُ ڪنهن جي کي ڌُوئن ٿا،
باک ويلي نيڻ ٻُوٽي،
سُور پنهنجي کي سَهَنِ ٿا،
هيکلائيءَ ۾ رُوئن ٿا،
ويڄ جيڪي تُون ڏِسِين ٿي،
قوم جو وشواس آهن.!!!

——————
ترجمہ اور مفهوم
یہ جو تم مسیحا دیکھ رہی ہو نہ، یہ بھی کسی کی امید ہیں اور ان کے چہرے کے داغ قوم کا وشواس ہیں۔،
اور یہ جو دُور سے قافلے آ رہے ہیں، ايسا لگتا ہے جیسے یہ موت کا سندیس ہیں، لیکن یہ پھر بھی ان کو خوش آمدید کہنے کے لئے تیار ہیں اور یہ زندگی کی وہ خوبصورت سانس ہیں جس کی خوشبوءَ ہر طرف پہلتی رہتی ہے، اور یہ وہ دیپ ہیں جو ہوا میں جلتے رہتے ہیں، ان کو روشنی کی خواہش ہے اور یہ ہر وقت موت کے اندھیرے سے لڑتے رہتے ہیں، اور یہ شام کو کتنا جلتے ہیں!، یہ وطن کی خاطر جنگ کی آخری دیوار ہیں، یہ ہمیشہ فتحیاب ہیں، کون کہتا ہے کہ یہ ھار (شکست) ہیں، اور جب یہ رات کی پچھلے پہر میں کسی مریض کا زخم صاف کرتے ہیں اور جب صبح ہونے لگتی ہے تو اپنے شدید درد کو محسوس کرکے، تنہائی میں جا کر روتے ہیں۔
یہ جو تم مسیحا دیکھ رہی ہو نہ، یہ بہی کسی کی امید ہیں اور ان کے چہرے کے داغ قوم کا وشواس ہیں۔

Comments are closed.