مُلکی موجودہ صورت حال

(رفاقت حسین بابر)

جہیڑے بندے کسے میدان وچ لڑن توں پہلاں ای ڈر جاندے نیں
میں ویکھیا اے اوہو ای بندے ہر پاسوں ای ہر جاندے نیں
مرن توں بعد وی اُونہاں دا ناں جگ تے زندہ رہندا اے
جان دی بازی لا کے جیہڑے دیس دی خدمت کر جاندے نیں
کَن کُھول کے سُن لے کورونا میرے پاکستان دے گھبرو
بنھ کے بمب جسم دے نال ٹینکاں ہیٹھاں وڑ جاندے نیں
مَن کے گَل حکومت دی گھر وچ ٹِک کے بہہ جاؤ لوکو
جیہڑے بندے من لیندے نیں اوہو ای بندے تَر جاندے نیں
ہتھ ناں ہتھ ملاؤن نوں چھڈو دل وچ پیار ودھاؤ لوکو
بہن بھراواں وچ بہہ کے ویکھوکِنج کلیجے ٹھر جاندے نیں
بابر جی دوناں ہتھاں نال سلامی میرے دیس دے خدمت گاراں نوں
دیس بچاؤن دی خاطر جیہڑےبَلدی اَگ وچ سڑ جاندے نیں
————————–
اردو ترجمہ
جو لوگ کسی بھی میدان جنگ کا ہو کھیل کا ہو یا کسی وباء نے ملک کو گھیر لیا ہو تو میدان میں اپنے حریف کا سامنا کرنے سے پہلے ہی ڈر جائیں حوصلہ ہار جائیں تو میں نے یہ بات اکثر دیکھی ہے کہ وہ لوگ ہر طرف سے ہی شکست کھاتے ہیں حریف سے بھی اور اپنے طرف داروں سے بھی سو اس کورونا وائرس سے بجائے ڈرنے کے ہمیں اس کا مقابلہ کرنا چاہیے ڈٹ کر ہمت اور حوصلے سے
مرنے کے بعد بھی ان کا نام دنیا میں ہمیشہ زندہ رہتا ہے
جو جان کی بازی لگا کر وطن کی خدمت کر جاتے ہیں
کان کھول کر کورونا وائرس یہ سُن لو کہ میرے پاکستان کے جوان
اپنے جسم کے ساتھ بمب باندھ کر دشمن کے ٹینک کے نیچے چلے جاتے ہیں .(اپنی جان کی پرواہ نہیں کرتے 1965 کی جنگ کے حوالے سے)
حکومت کی بات مان کر لوگو گھروں میں آرام سے بیٹھ جاؤ
جو لوگ بات مان لیتے ہیں وُہی لوگ کامیابی حاصل کر لیتے ہیں (تر جاندے نیں .جو ڈوب رہے ہوں اور کسی کی نصیحت پر عمل کر لیں تو پھر ڈوبنے سے بچ جاتے ہیں)
ہاتھ سے ہاتھ ملانے کو چھوڑو دل میں ایک دوسرے کا پیار بڑھاو لوگو
اپنے بہن بھائیوں کے پاس بیٹھ کر وقت گزارو کس طرح دل میں ٹھنڈک پڑ جاتی ہے جب اپنے خونی رشتوں کے ساتھ بیٹھ کر انسان وقت گزارتا ہے
آخر میں میرا دونوں ہاتھوں سے سلام ہے افواج پاکستان کو ڈاکڑز کو اور تمام خدمتگاروں کو
دیس کو بچانے کی خاطر جو جلتی آگ میں خود جل کر لوگوں کو بچا رہے ہیں.

Comments are closed.