مچھلی فروش

(حمیرہ نور)

بہن جی
سات دنوں بعد
آج مچھلی ملی ھے
اور ابھی تک
دوپہر کے دو بج گٸے ھیں
ایک بھی خریدار نہیں ملا۔۔۔۔۔۔!!
کوٸی کھہ رہا ھے
تمہیں کرونا نا ھو۔۔۔۔۔۔۔۔!
مچھلی کو کرونا نا ھو۔۔۔۔۔!
ھم غریب کہاں جاٸیں!!!!؟
نا روز گار ھو رہا ھے
نا سرکار کچھ دے رہی ھے
صرف سنتے آرھے ھیں کہ
امداد ملے گی
امداد بٹے گی
ھمیں تو کسی نے
کچھ بھی نہیں دیا
پہر بھی خاموش بیٹھے ھیں
گھر میں کھانے کو نہیں
باھر روز گار نہیں
کوٸی سواری بھی نہیں
سر پے مچھلی اٹھا کر
جامشورو سے حیدرآباد
پیدل آیا ھوں
بہت تھک گیا ھوں
اگر آج
کسی نے مچھلی نا خریدی تو
اودھار کیسے واپس کروں گا؟
اور شام کو
بچوں کو کیا منہ دیکھاٸوں گا!!؟

Comments are closed.