بدلتی دنیا کا رنگ

(ڈاکٹر شاھدہ سردار)

کرونا وائرس.. بدلتی دنیا کا رنگ..

زندگی کو گہن لگنے لگا ھے…
سفر مشکل سے اب کٹنے لگا ھے…
ھے کتنی بے کراں یہ زندگی اب..
ھے کتنی ناتواں یہ زندگی اب…
کہاں پہ کھو گئی رخشندگی اب…
ھواؤں میں نہیں رقصندگی اب….
چمن میں چار سو پھیلی ھوئی ھیں…
ردائے زرد میں لپٹی ھوائیں…..
وباء کی پھیلتی تاریک آندھی…
لپٹتی جا رہی ھے زندگی سے…..
بہت ارزاں ھوئی یہ زندگی اب….
بہت نالاں ھوئی یہ زندگی اب….
تڑپتی سسکیاں دل میں دبی ھیں…
نگاہوں میں دھواں سا بھر گیا ھے…
نظر آتے نہیں ھیں اشک میرے….
مگر اک درد بہتا جارہا ھے…
نگاہ پتھرائی تکتی جارہی ھے….
یہ دنیا کون سے رُخ پہ چلی ھے….
بکھرتا جارہا ھے دکھ کا موسم….
جہاں ارض وسماء جنگل بیاباں…
گلی کوچہ دفاتر ہر جگہ پر…
کہیں کعبہ کہیں مسجد و ممبر..
کڑی خاموشیوں میں گِھر گئے ھیں…
وباء کا خوف پھیلا ھے یہ کیسا…
محبت بھی گریزاں ھے دلوں میں
ہر محبت سے….
کہ ہر بندہ ھی بندے سے پناہیں مانگتا ھے….
تو ایسے حشر کے موسم میں اترے مہرباں ایسے… مسیحا قوم کے جانباز مجاہد قوم کے فرزند….
اچانک بے یقینی کی جلتی دھوپ میں جیسے….
امید وآ آس کی ٹھنڈی گھٹائیں سب پہ یوں برسیں….
ستارے بن کے آنکھوں میں چمکنے لگ گئیں کرنیں…
اُمّید و آس کی کرنیں…
سلام اے قوم کے سب جانبازوں سرفروشوں پر….
سلام اے قوم کے پُر عزم مسیحا تیری جَرات پر….
یقیں ھونے لگا اپنے یقیں پر اس گھڑی مجھ کو…
نگاہئں جھک گئیں لب پر دَعا سجدے میں سر رکھ کر…
میرے اشکوں نے اپنے “رب” سے ایسی التجائیں کئیں….
خُدا آزاد کر اس سر زمیں کو….
خُدا آزار کر اس زندگی کو….
ھماری ہر خطا کو معاف کر دے…
ھماری ہر سزا کو معاف کر دے….
ھمیں لوٹا دے وہ آزاد جیون…
ھمیں لوٹا دے وہ شاداب جیون…..
کڑی یہ آزمائش دور کر دے….
میری دنیا کو پھر پُر نور کر دے…
آمین

Comments are closed.