حملہ آور ہیں اب قاتل جرثومے شہروں پر

(سحر خان)

حملہ آور ہیں اب قاتل جرثومے شہروں پر

کبھی گراتا تھا سامراج ایٹم بم دنیا پر ____

حملہ آور ہیں اب قاتل جرثومے شہروں پر ۔۔۔۔۔!!!!

اب اور ڈھنگ ہے لڑنے کا عالمی جنگ و تسلط سے

ہنر و دریافت، علم و آگہی کا سایہ ہو اپنی سوچوں پر۔۔۔۔۔۔!!!!

تیسری دنیا کو ہے لاحق پسماندگی، مفلسی و بےروزگاری بھی

گہرے پانیوں میں بارود بھرا ہے، موت رقصاں ہے لہروں پر۔۔۔۔۔!!!!

اک نئی دنیا اک نئے جہاں کی تلاش ہے سب کو

بقائےحیات منحصر ہے فلک کی اوجھل جہتوں پر۔۔۔۔۔!!!!

مسلےء گی نہ محکومی و جبر کی قوت کسی اجیر کو

طوق غلامی نے شکنجا ہے کسا ہوا صدیوں سے بے بس نسلوں پر ۔۔۔۔!!!!

سورج کی تمازت بخشے گی رمق روۓ زمیں پہ ہر سو

لوٹ آۓ گی پھر رونق زیست یہاں آب وتاب سے سڑکوں پر ۔۔۔۔!!!!

لامکاں سے پائیں گوہر ہستی و راز گردوں ۔۔۔۔۔

دریچے وا ہوں حوادث کے نئی صبحوں نئے قرنوں پر ۔۔۔۔۔!!!!

آرزو ہے سحر کہ صدیوں کی محرومی کا مداوا ہو سکے

کھل جائیں قفل جو ثبت ہیں ازلوں سے بھجے دلوں پر ۔۔۔۔!!!

Comments are closed.