میرے دیس میں یہ کیا ہو رہا ہے آدمی آدمی کے ہاتھوں مر رہا ہے

(حکیم ارشد شہزاد)

میرے دیس اندر ایہ کیہ ھوئے کردا
بندا بندے دے ھتھوں مروئے کردا

جنھے ویلے دی نہیں سیہان کیتی
پچھے کُتیاں دے توئے توئے کردا

اجے ویلا ای غافلا ھوش کرلے
سورج عُمر دا پیا کروئے کردا

بوھے پیڑ کے وڑ جاؤ اندراں دے
شہر وچ ڈھنڈھورا پَٹوئے کردا

ایسے لئی ہے ایتھے عذاب ارشد
رُسا رب نہیں ساتھوں منوئے کردا

————-
ترجمہ
میرے دیس میں یہ کیا ہو رہا ہے آدمی آدمی کے ہاتھوں مر رہا ہے
جِس نے وقت کی قدر نہیں کی وہ ساری زندگی خوار ہوتا ہے
اب بھی وقت ہے اے غافل ہوش کر تیری عمر کا سورج غروب ہو رہا ہے
اپنے دروازے بند کرکے کمروں میں چلے جاؤ شہر میں اعلان ہو رہا ہے
اسی لیئے یہاں پر عذاب ہے کہ ہم سے روٹھا ہوا رب منایا نہیں جا رہا

Comments are closed.