کرونا کے تناظر میں

(رضوانہ تنسم درانی)

کرونا وائرس دے تناظر وچ
نظم
زرا سوچو
اتھاں پہلاں افرا تفری ہی
اُتوں قہر خدا دا نازل تئھے
ان ڈھٹیا وائرس چوں پاسوں
قتلام کریندا ٹُردا گے
جیکوں ادھے کرونا وائرس ہیں
ہر جا دی وسًوں مُک گئی ہے
ویران ہٍن میلے ٹھیلے وی
تھے پکھ پندھیڑو مونجھے ہین
پھول کلیاں وی کملا گیا ہن
بے خوف اناں نکڑے بالاں وچ
وڈکیں دی فکر توں ہاں لہندے
ہر پاسے ہو دا عالم ہے
اٍتھاں سرماۓ تے دھن والے
وس کولوں وی بے وس تھے ہٍن
ہے جان پیاری ہیں سانگھوں
بے وسٗوں قید بھو گیندے ہٍن
اے سوچیے وے اے کیوں تھیا ہے
ہر گھر اِچ چُپ دے پہرے ہِن
بُکھ ننگ تے ترہیہ وی زور دی ہے
پیسہ ہے پر شے ملدی نئی
ہے منافع خوری کم ساڈا
ہے سود دا کاروبار اتھاں
جڑ کپنڑیں بے دی سوچ ایہا
تُہمت وی لاونڑ شان اِتھاں
جیڑھا ناں ہے کرونا وائرس دا
اعمال آساڈے اپنڑے ہِن
ذرا سوچو ایں تے غور کرو
اسَاں دین توں کتنے دور ہِسے
قرآن نماز تاں ھِک پاسے
سب وَیر کمیندن لوک اِتھاں
لش پش تے دَھن تے دولت دا
اِتھ ہر ہِک فخر وڈائ وچ ہے
نا رُتبے اپنڑۓ غیر دے اِتھ
اِتھ لالچ حرص حوص دا بس
چلکار وی ہے گُھبکار وی ہے
ذرا سوچو ایں تے غور کرو
ہے مقابل ساڈے وائرس اے
گھر بہہ تے جنگ اساں کرنی ہے
دلدار اساڈا رب سوہنڑا
لُک چُھپ تے اوندا ذکر کرو
توبہ دے در اجاں کُھلیے ہِن
رُورُو تے وت ازکار کرو
ساڈی توبہ رب کوں بہوں بھاسی
اوندی رحمت جوش ولا کھاسی
خوشحال تبسم سب تھیسن
اے چھِتٌا وائرس مُک ویسی
اے دنیا وت آباد تھیسی
ہاں ٹھرسی ہر ہِک شاد تھیسی

———
نظم( زرا سوچو) کرونا کے تناظر میں
اس نظم میں یہ بتایا گیا ہے کہدنیا میں پہلے ہی بہت افراتفری ہے اوپر سے اللہ کی طرف سے یہ قہر نازل ہو گیا ہے۔ ایک ایسا وائرس جو جان لیوا ہے ہر طرف ہو کا عالم شہر کے شہر سنسان۔ بھوک افلاس۔ خوف و ہراس۔ آج سب لوگ گھروں میں نہ چاہتے ہوے بھی قید ہیں۔ پیسہ ہے مگر خوراک نہی مل رہی۔ زرا سوچیے ایسا کیوں ہے؟
یہ سب ہمارے اعمال ہیں۔ سود کا کاروبار کرتے ہیں۔ منافع خوری۔دوسروں کی ٹانگیں کیھنچنا۔ تہمت لگانا۔ یہ ہیں ہمارے اعمال۔ کرونا نے تو پھر انا ہی تھا اللہ نے رسی کھینچنی ہی تھی۔ زرا سوچیں ہم ہمارے بچے دین سے کتنے دور ہو گے ہیں۔ نمازقران تو ایک طرف اپنی دولت کے تکبر میں ہیں اپنے غیر کی پہچان ختم۔ لالچ حرص کا دور دورہ ہے۔ زرا سوہیے اس پہ غور کریں؟
اب گھر بیٹھ کے کرونا سے جنگ کرنی ہے۔ رب بہت پیارا ہے محبت کرنے والا ہے اسکا زکر کرنا ہے اسے منانا ہے۔ اسکی رحمت ضرور جوش میں آئیگی۔ ہماری توبہ اللہ ضرور قبول کرے گا۔ واہرس ختم ہو گا اور یہ دنیا پھر شاد آباد ہو جائیگی انشاہ اللہ

Comments are closed.