ڈاکٹر اسامہ

(زاہدہ نتہا)

نظم ډاکټر اسامہ

مونګہ بہ زوړ جانان او ہاغہ مينہ
ہيرہ کړو شاتہ پريګدو
ڼور لکہ داسى ارمان
پہ خپل زړګي لرمہ
چہ ليونتوب غواړي جنون غواړي
تاودي جزبے ہم شواخون غواړي
انسانيت لہ بہ خپل ځان ورک کړو
راځي چہ قدر د انسان اوکړو
مونګ بہ پري مينہ د جانان اوکړو ،
————–
ترجمہ

ڈاکٹر اسامہ
مين اپني محبوبہ اور اسکے پيار کو
أس سارے جزبو کو
دل کے ګہرايون مين مقيد کر کے
لے چلا ہوڼ اس سفر پے
کہ جس مين
قدر ہو انسان اور انسانيت کى
جو بړہ کر ہے سبى محبتون سے
جو پيا را ہے
ميرے ،، مو لا،، کو سب سے،

Comments are closed.