زمین کا نوحہ

(نادیہ عنبر لودھی)

پنجابی نظم

دھرتی دا ہاڑا

دھرتی اُتے ہسدے وسدے بندے بُھل بیٹھے نے وسنے دا وَل

سب نوں آپو اپنی پے گئی اے

جندھڑی وباواں دی زد وچ آگئی اے

مندر، مسیت ،گرجا ، کعبہ سب بند نیں

بندیاں اُتے جین دے سارے ڈھب بند نیں

خورے رب رُس بیٹھا اے

بندہ بندیاں تو لُک بیٹھا اے

دھرتی تے وسدے وسدے بندے وی تا بُھل بیٹھے سان وسنے دا وَل

رب بندیاں دا رستہ اپنے وَل کرنا چاہندا اے

جگ تے جیون دا مقصد فیر دسنا چاہندا اے

اپنے آپ نو ں خطرے وچ پا کے ڈاکٹر نبھا ریے نے فرض اپنا

تے سرکار وی کررہی ہے پوا فرض اپنا

اساں وی ادا کریے انسان ہونے دا فرض اپنا

اے جہان ساڈے نال اے

قرنطینہ چے رہنا اسان نہیں اے

ایس دھرتی نوں قرنطینہ بنن تو بچانا ہووے گا

دھرتی نوں جین دے لائق بنانا ہووے گا

——————————
(ترجمہ)
“زمین کا نوحہ ”

زمیں پر خوشی خوشی رہنے والے رہنے کا ڈھنگ بھول بیٹھے ہیں

سب کو اپنی اپنی فکر لگ گئی ہے

زندگی وبا کی زد میں آگئی ہے

مندر ،مسجد ،گرجا گھر ، کعبہ شریف سب بند ہوگئے ہیں

زندگی گزارنے کے تمام قرینے بند ہو گئے ہیں

شاید خدا ناراض ہو چکا ہے

اسی لیے انسان انسان سے چھپ بیٹھا ہے

زمین پر رہتے رہتے انسان بھی تو جینے کا قرینہ بھول گئے تھے

خدا انسان کو خود سے جوڑنا چاہتا ہے

زندگی کا مقصد دوبارہ بتانا چاہتا ہے

خود کو خطرے میں ڈال کے ڈاکٹرز اپنا فرض ادا کررہے ہیں

حکومت بھی اپنا فرض ادا کررہی ہے

ہمیں بھی اپنے انسان ہونے کا فریضہ ادا کرنا چاہیے

یہ جہاں ہم سے ہی ہے

قرنطینہ میں رہنا آسان نہیں ہے

اس دھرتی کو قرنطینہ بننے سے بچانا ہوگا

اسے جینے کے لائق بنانا ہوگا

Comments are closed.