مہربان رب

(اسمإ عبدالقدیر شیخ)

زندگی کی دھوپ میں
ہر اک نۓ روپ میں
تمازت ہی تمازت میں
حقارت ی حقارت میں
خفا ہوتے ہی حقیقت میں
ادا دکھلا ٸ ظلمت میں
ندا آٸ یہ خلوت میں
نہ پریشاں ہو توُ جلوت میں
ہم ہیں نا تیری شہہ رگ میں
جو پکارےتوُ مجھے اذیت میں
بدلتا پاۓ توُ اسے راحت میں
کیوں کہ ہم ہیں نا تیری شہہ رگ میں

Comments are closed.