کرونا

(ڈاکٹر نقیب احمد جاؔن)

(قطعہ)
کرونا
فلاحِ خلق کا دم بھی بھرو نا
کرو نا تم بھی تو ایسا کرو نا
کرونا نے تو کردی زیست مفلوج
کریں معدوم سب مل کر کرونا
******
(نظم)
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
کرونا درپئے آزار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
***
گھڑی یہ بھی مصیبت کی گھڑی ہے
کہ ہر اک شخص کو اپنی پڑی ہے
قیامت سے بہت پہلے ہی دیکھو
قیامت زیست ہی میں آپڑی ہے
صلائے عام ہے ہُشیار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
***
وبا ہے کیا بلا ہے بے بسی ہے
فضا میں ایک وحشت سی رچی ہے
اٹھے تو اٹھتی ہیں مشکوک نظریں
اسیرِ وہم ہر اک آدمی ہے
بہت دشوار ہے دشوار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
***
نہ اجڑی اس طرح سے محفلیں تھیں
نہ تو گُل ایسی ساری مشعلیں تھیں
کسی نے بھی نہ دیکھا ہوگا ایسا
کہ ایسی ماند ساری رونقیں تھیں
نہ دنیا ایسی تھی بیمار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
***
کرونا سے نہیں ڈرنے کی حاجت
یہ آیا ڈالنے خوئے طہارت
ہوئی دنیا تھی یہ آلودہ ساری
جو یوں رہتی تو رہتی کب سلامت
بنا فطرت کا ہے پرچار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو
***
کسی سے بھی نہیں انسان ہارا
کہ خالق نے اسے اشرف پکارا
کرونا کی حقیقت ہے بھلا کیا
کوئی دن میں کرے گا یہ کنارا
یقیں محکم ہو پائیدار یارو
اُمیدِ زیست ہے درکار یارو

Comments are closed.