تو، کہ جانے ہے کس گماں میں یہاں

(طارق بٹ)

تو، کہ جانے ہے کس گماں میں یہاں
ایک دنیا ہے امتحاں میں یہاں
۔۔۔۔۔
پھر سے اک غارتِ جہاں کردار
لوٹ آیا ہے داستاں میں یہاں
۔۔۔۔۔
خالقا ، مالکا ، خبر ہے تجھے
خلق تیری ہے کس زیاں میں یہاں
۔۔۔۔۔۔
صف شکستہ ہوئیں جو سجدہ گہیں
خوف کی بندشیں، اذاں میں یہاں
۔۔۔۔۔
یہ سماں تو بہار ہونا تھا
کیسا پت جھڑ ہے گلستاں میں یہاں
۔۔۔۔۔۔
فصل گل اور بے نقیب چمن
عندلیب اور خستہ گاں میں یہاں
۔۔۔۔۔۔
عفو اور عافیت کے دیون ہار
خیر دے، خیر ہو جہاں میں یہاں

Comments are closed.