گھر رہو دوستو

(عاصم بخاری)

مانتے ہو جسے،اُس کا ہےواسطہ،گھر رہو دوستو،گھر رہو دوستو

ہے حفاظت کا بس اک یہی راستہ، گھر رہو دوستو،گھر رہو دوستو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو نہ جاٸے بغل گیر ناداں کوٸی،سادگی کےسبب،اس سے بہتر ہے کہ

مِلنا پڑجاٸے با،دل ِ ناخواستہ، گھر رہو دوستو،گھر رہو دوستو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پڑ نہ جاٸے کہیں مہنگی آوارگی، ساتھ وہ واٸرس بھی نہ لے آٶ تم

گھر تلک پہنچ جاٸے نہ بالواسطہ،گھر رہو دوست

Comments are closed.