مانتاہوں میں وقت کڑا ہے, پر جینا تو جینا ہے

( کاظم حسین کاظم )

مانتاہوں میں وقت کڑا ہے, پر جینا تو جینا ہے
ویسے بھی امید ہے تب تک،جب تک اپنا اللہ ہے.

سانس کے نیزے لیکر سارے, سرخ وبا کو ماریں گے
انشاء اللہ تعالی’ہم نے, سرخ وبا سے جیتنا ہے

فوج،مسیحا خدمت میں ہیں, ساری قوم اکٹھی ہے
مالک قائم دائم رکھے, یہ انسانی جذبہ ہے

وقت کی مرضی ماننا ہوگی،دور رہیں اور پاس رہیں
ہم نے فاصلہ رکھ کے بچانا،اپنا ہر اک رشتہ ہے

ہر اک لمحہ خوف ہے لیکن،کربل سے منسوب ہیں ہم
جیت ہماری ہوگی کیونکہ, ہم میں اتنا حوصلہ ہے

ایک ڈرؤنا خواب سمجھ کر،اس میں کچھ دن سانسیں لیں
عین یقین ہے آنے والا,سارا وقت ہمارا ہے

سچ ہے ایک وبا پھیلی ہے, ہر سو ہو کا عالم ہے
پر ایسے حالات میں دیکھو،جو تھا غیر وہ اپنا ہے

یار دعائیں امیدؤں کو،زندہ رکھنے والی ہیں
اور دعائیں تب تک ہونگی،جب تک جذبہ زندہ ہے

ہم ہیں ایک ازل سے اور, ابد تک ایک رہیں گے ہم
تیرا میرا کیا ہوتا ہے؟جو ہے درد ہمارا ہے

سچے دل سے کاظم سب کی،خیر طلب میں کرتا ہوں
سچ کا ساتھ یقینا” دے گا،کیونکہ اللہ سچا ہے

Comments are closed.