چھین لیں یہ کس نے اس شہر کی رونقیں

( سحر خان )

چھین لیں یہ کس نے اس شہر کی رونقیں

پڑ گئیں ماند کیوں دل بےتاب کی حسرتیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!!

بڑھ گئیں تھیں شاید اک دوجے سے نفرتیں

روٹھ گئیں آج ہم سے قدرت کی ساری نعمتیں۔۔۔۔۔ !!!!!

اک وبا نے دنیا کو بدل دیا اجڑے دیار میں

انساں نے ازلوں سے اٹھائی ہیں کتنی ہی اذیتیں ۔۔۔۔۔!!!!!

گنگناتی چاندنی سنگ کتنی جواں تھیں راتیں

تھم گئیں ہوں جیسے اک پل کو دھڑکنیں ۔۔۔۔۔!!!!!

کس سے کہیں حال دل کسے اپنا کہیں

لرزاں ہیں بام و در یہاں اور گل ہوئیں شمعیں ۔۔۔۔!!!!

پھر وہی ہوں رتجگے،روشنیوں کی بارات ہو

دعا ہے گلشن میں پھر سے اک بار چہکیں بلبلیں ۔۔۔۔!!!!!

خوشیوں کہ میلے ہوں چار سو،گل ہی گل کھلیں

کھو نہ جائیں پھر کہیں رفتہ رفتہ محبتیں۔۔۔۔۔!!!!!

برسے شبنم کی پھوار ، بہکی بہکی صبا کی چال

رت بہار کی چھاۓ ہر سو، گل و گلزار مہکیں۔۔۔۔!!!!

Comments are closed.