کورونا وائرس

( اصغر علی زیدی )

میں زخم خوردہ

میں دل بہ گریہ

میں چھلنی چھلنی

مرا وجود جھلس رہا ہے

میں سر اٹھاتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو دیکھتا ہوں

انسان جل رہا ہے

انسان مر رہا ہے

میں سر اٹھاتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو دیکھتا ہوں

کہ رنگ پھیکے سے پڑ گئے ہیں

دیواروں کی پختگی میں اور وسعتوں میں

کمال حد تک تناو سا آگیا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کھچاو سا آگیا ہے

تمام رشتے دراڑوں کی نذر ہو چکے ہیں

جو میل کی چند بچی کھچی صورتیں تھیں

وہ صورتیں ہم کھو چکے ہیں

میں سر اٹھاتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو دیکھتا ہوں

افق کی نیلی حدوں سے آگے

زمیں کی جانب

مصیبتوں کے سفاک لشکر اتر رہے ہیں

میں گھر کی درزوں سے جھانکتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو دیکھتا ہوں

وباوں کے قافلوں میں اذن سفر کے گویا

گنگ نقارے بج رہے ہیں

ہجوم بے حس نیچے پلٹ رہا ہے

زمیں کی جانب سمٹ رہا ہے

کنار شرق تا غرب بٹ رہا ہے

سسکتے لوگوں میں کلبلاتے،

فلک رسیدہ،

ٹھٹھرتی سانسوں،

سلگتی آہوں سمیت کچھ لوگ دہک رہے ہیں

میں دیکھتا ہوں گویا بچے بلک رہے ہیں

فضائیں دم بستہ

پیڑ خاموش

ہوائیں ساکت

پرندے چپ چاپ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نقش بہ دیوار بنے ہوئے ہیں

نشاط خانوں کی چلمنوں سے

فسردگی کا مہیب دھواں ابھر رہا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صموت چہرے تنے ہوئے ہیں

میں دیکھتا ہوں کہ

خوف

خانہ بدوش بن کر

جہان بھر کو اسیر خانہ بنا رہا ہے

یا ایک طوفان زمیں کی جانب کو آ رہا ہے

اے خاک خوں ریز کے بھوچکے لوگو!

تم بھی دیکھو!

حواس مسلوب

اندوہ بے حد

شور محشر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو رفتہ رفتہ بڑھ رہا ہے

تم بھی دیکھو

انسان مر رہا ہے

انسان مر رہا ہے

Comments are closed.