اپنی ہستی مستی میں ہے جہاں سارا

( انیلا تبسم )

اپنی ہستی مستی میں ہے جہاں سارا
اک ہم کہ افسردہ و پریشاں خاموشی
میں سمیٹے جہاں سارا عالم میں ہر طرح
محشر بپا ہے ہر ایک غم و اندوہ میں پڑا ہے
زندگی کیاہے کچھ نہیں خالی ہاتھ کھڑا ہے
سب کچھ اس کی عطا ہے اے خاک
کے پتلے کیوں کرتا ہے ناز
اپنی ہستی پر اے خاک پتلے خاک
میں مل جانا ہے……………..

Comments are closed.