کرونا کی اے

(عاصم پڑھیار)

کرونا کی اے ؟

کرونا ایسی وباء اے یارو
علاج جس دا جہان اُتے
ایجاد ہویا اجے نہیں کِدھرے

کرونا ایسی وباء اے یارو
جو ہتھ مِلاون تے کھنگھ کرن توں
یا نِچھاں مارن توں پھیل دا اے
جو سینیٹائزر ڈیٹول,صابن
نوں ورتدا اے ایہ اوس بندے توں دُور راہندائے

کرونا ایسی وباء اے یارو
دیہاڑے چوداں طبیب کہیں نوں ملوم ہوندا نہیں بھور وی ایہ زُکام نزلے شدید کھانسی
دے نال نِچھاں اُکھڑدے ساہ تے بُخار دھڑکا جناب پکیاں علامتاں نیں

کرونا ایسی وباء اے یارو
جو ساکاں سیناں عزیزداری
دا قائل نہیں اے ہکّل خوراں
دی لاہم دا اے ہکّل خوری
تے راضی راہندائے
کسے نوں گھر اچ نہ آن دیوو
کسے دے گھر اچ نہ آپ جاوو
آزادی اپنی نوں قید سمجھو
محفوظ جیون گزار جاسو

کرونا ایسی وباء اے یارو
جو گھر کسے دے نہیں آپ جاندا
جے نال ایہنوں نہ کوئی لیجاوے
جو نک تے منہ نوں ولیٹدا نہیں
تے ننگے ہتھیں اوہ پھیرا لاندا
بازار دا اے
وباء نوں جاکے ونگار دا اے
قبیلہ ہتھیں اوہ ماردا اے
وسیب سارا اُجاڑ دا اے

کرونا ایسی وباء اے یارو
خوراک ایہندی عجیب جہی اے
حیاتی بندیاں دی کھاج ایہندا
پرہیز ہکو علاج ایہندا
پرہیز ہکو علاج ایہندا

—————–

اردو زبان میں مفہوم

کرونا کیا ہے

کرونا ایسی وباء (بیماری) ہے دوستو
جس کا ابھی تک پوری دنیا میں کوئی علاج دریافت نہیں ہوا

کرونا ایسی وباء ہے دوستو
جو ایک شخص کے دوسرے شخص سے ہاتھ ملانے (مصافہ) کرنے, کھانسی کرنے, یا چھینکیں لینے سے پھیلتی ہے
لیکن جو شخص بار بار سینیٹائزر, ڈیٹول اور صابن کا استعمال باقاعدگی سے کرتا ہے کرونا وائرس اس کو نہیں لگتا

کرونا ایسی وباء ہے دوستو
جس کی تشخیص چودہ دن سے پہلے کوئی ڈاکٹر نہیں کرسکتا اور نہ ہی چودہ دن سے پہلے اس وائرس کا کسی کوعلم ہوتا ہے
ہاں البتہ جس شخص کو یہ وائرس لگ جاتا ہے تو اس شخص میں ذیل علامات ظاہر کرتا ہے مثلاً اسے زکام نزلہ شدید کھانسی چھینکیں اور سانس لینے میں دُشواری کے ساتھ ساتھ بخار ہوتا ہے

کرونا ایسی وباء ہے دوستو
جو بندے کو اپنے خاندان رشتہ داروں کے ساتھ رہنے کےحق میں نہیں ہے کیونکہ اس طرح وہ ساتھ رہنے والوں کو بھی لاحق ہوجاتا ہے کرونا نے پوری دنیا کو الگ الگ رہنے پر مجبور کر دیا ہے اس سے بچاؤ کا ایک ہی طریقہ ہے کہ آپ کسی کو اپنے گھر نہ آنے دیں اور نہ ہی آپ کسی کے گھر جائیں اور جو لوگ ایسا کریں گے صرف وہ لوگ ہی اس سے محفوظ رہیں گے

کرونا ایسی وباء ہے دوستو
جو اپنے آپ کسی کے گھر نہیں جاتا ہاں البتہ اگر کوئی شخص جب گھر سے باہر بازار یا ہجوم میں جائے اور وہ منہ پے ماسک اور ہاتھوں پے دستانے نہ پہنے گا تو وہ شخص کرونا کو خود جاکے دعوت دیتا ہے کہ وہ اس کے خاندان میں پھیل جائے اور طرح وہ ایک شخص اپنے خاندان کی موت کے ساتھ ساتھ پورے معاشرے کی موت کا سبب بنتا ہے

کرونا ایسی وباء ہے دوستو
جس کی خوراک بھی عجیب ہے
انسانوں کی زندگیاں ہی اس کی خوراک ہیں
ہاں مگر اس سے بچاؤ کا ایک ہی طریقہ ہے کہ ایسے لوگوں سے دور رہا جائے جن کرونا وائرس ہوچکا ہو
بس یہی پرہیز ہی اس کا علاج ہے

Comments are closed.