امیدیں بانٹتے چلیے

(رشیدالظفر)

امیدیں بانٹتے چلیے
امیدیں بانٹتے رھیے
بہاریں لوٹ آئیں گی
پرندے چہچہائیں گے
یہ دنیا مسکرائے گی
یہ مشکل وقت ھے ھم پر
مگر ھم حوصلہ رکھیں
تو مشکل ٹل ھی جائے گی
یہ شامیں آ پڑی ھیں جو
تو یکسر ڈھل ھی جائیں گی
مجھے پورا یقین ھے اب
من حیث القوم سب نے
ایک ھونے کی جو ٹھانی ھے
یہ وحدت کی نشانی ھے
اگر وحدت رھے قائم
اگر کچھ احتیاطیں ھوں
تو پھر سورج بھی چمکے گا
بچے کھلکھلائیں گے
بوڑھے مسکرائیں گے
اور آخر میں رشید الظفر پھر اک بار کہتا ھے
امیدیں بانٹتے چلیے، امیدیں بانٹتے رھیے

Comments are closed.