نظمیں

(حفیظ تبسم)

وبا کے چاردنوںکی ایک نظم

(۱)
لاک ڈاؤن کے اعلان پر
پیٹ بھرے لوگوںنے جشن سا منایا
اور برسوں کے بھوکے لوگ اداسی کی دلدل میں دھنس گئے

میں نے سوچا کہ
زندہ رہنے کے لیے خوراک ضروری ہے
یا
تازہ سانس
اور کوئی فیصلہ نہ کرپایا

(۲)
گھر میں ذخیرے کے نام پر
اشیائے خوردنوش موجود تھیں
جو ایک شام بھی پیٹ بھرنے کے کام نہ آسکیں

بوڑھی ماںنے اپنے حصے کی روٹی میرے سامنے پیش کردی
اور جوان بیوی نے بچوںکو
میں نہ سوچ پایا
کہ مائیں بھوکے پیٹ
بچوںکی پرمسرت زندگی کے خواب کیسے دیکھ لیتی ہیں

(۳)
میں سوچتا ہوں
کہ رات لمبی ہے یادن
جس کا شور میرے بدن پر ناخن رگڑرہا ہے
مگر شور کہاں ہے؟
ہر طرف ہو کے عالم میں
بچوںکی سرگوشیاں سنائی دے رہی ہیں
یا
ماؤں کی دعائیں
جو آسمان کے خدا
اور زمین کے ناخداؤںکے کان میں جانے سے پہلے
جھاگ کے بلبلے کی طرح دم توڑرہی ہیں

میرادل خوف سے ڈوب رہا ہے
میں لرزتا ہوں
اور رحم کی تمنامیں رودیتاہوں

(۴)
چوتھادن
مہینے،سال بن کرگزررہا ہے
اور میرے اندر
زندہ رہنے کی خواہش دم توڑرہی ہے
میں لرزکر بولتا ہوں
خدا!
اے ہمارے انسانوںکے خدا!
میں موت کے کھیل میں ہارچکا ہوں
مگر
میں نے زندہ رہ کر
بچوںکی خوراک
اور بوڑھی ماں کے دمے کی دوا خریدنی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حوصلے اور یقین کی علامت
(پوری دنیا کے طبی ماہرین کے نام)

زمین کے ماتھے پر
وبا نے اپنا ہاتھ رکھا اور نسلوں کے خواب رحم کی اپیل کرنے لگے
ہرشے
خوف کی علامت بن کر ڈرانے لگی
اور کچھ لوگ لالچ کے بیل اور بوٹے بنانے میں مصروف ہوگئے

حساس دل ماہرین
زمین کے گرم ماتھے پر چلتے
خوف کے سائے سے آگے نکل گئے

نامانوس صدمات نے ماؤںکی خواب گاہوں پر پہرے بٹھادیے
مگر بے پروا ہجوم
اور
کفن کے مہنگے دام تاجروں کے درمیان
ایک آواز
وقت کے صحرا میں گونج رہی تھی
’’موت کا عذاب
اور ہم
آزمائش کے بندھن میں جکڑے ہوئے ہیں‘‘

اک یقین تھاآواز میں
اور ہم ماہرین کے لیے دعا کررہے تھے
جن کی شہ رگ موت کے مضبوط ہاتھوںمیں دب رہی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وبا کے دنوںمیں کتاب

موت
بند دروازے کی جھریوںسے منھ چڑارہی ہے
اور خوف کا بھوت
میرے سامنے کرسی پر دوزانو بیٹھا ہے

میں اور میرا ہمزاد
ارادے کے نشیلے بدن کو جوڑتے ہیں
اور میں
اپنے ہمزاد کے مشورے پر کتاب کھولتا ہوں

کتاب
میری انگلی تھامے خود آگہی کے جنگل میں نکل پڑتی ہے
اور میرا ہمزاد
اونچے درختوںپر بندر کی طرح چھلانگیں لگاتا ہے
گلہریوںکے پیچھے بھاگتا ہے
لومڑیوں کو ادھ کھائے پھل پھینک کر نیند سے جگاتا ہے

میں
کرسی پر پہلو بدلے بغیر
موت
اور خوف پر اپنی برتری محسوس کرتا ہوں
حالانکہ دور کہیں روتی آوازوںکا ماتم سن رہا ہوں

میں ایک جنم کی خاموش اطاعت کے نرغے میں
بشارت کے دن کا انتظار کررہاہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انتظار کا آخری دروازہ بند ہونے سے پہلے
(قرنطینہ میں پڑے متاثرین کے لیے )

دنیا کے ہجوم میں
اکیلے لوگو!
تمھارے چہرے شہر کی دہلیز پر پڑے ہیں
سب کواڑ بند ہیں
مگر بہت سی آنکھیں آنسو بہاکر خشک ہورہی ہیں
وہ آنکھیں
جو تمھاری ماؤںکے چہرے پر لگی ہیں
باپ بھائی اور
محبت کے تحفے بھیجنے والے دوست کی آنکھیں

یقین مانو!
بے بسی کا انجام موت نہیں ہوتا

وقت کی اونچی شاخ پر
امید کے گھونسلے میں تمھاری زندگی کے بچے پَر نکال رہے ہیں
کسی دن
شرارتی لڑکا تمھیں اتار لائے گا
(شرارتی لڑکا ،مذہب کی عینک اتارکر غلیل سے موت کا نشانہ باندھ رہا ہے)
اور ہم
وبا کی شکست کا جشن مناکر
تمھارے لیے محبت کے تازہ گلدستے لیے آئیں گے

یقین مانو!
دنیا کے ہجوم میں
اکیلے لوگو!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بھوک کا تلخ ذائقہ
(عہد کے سیاہ سرمایہ دار کے لیے ایک نظم)

میں
زندگی کے بیش قیمت دن
بدبودار پسینے کے سیلاب میں بہاچکا ہوں

میں
اپنی ساری بساط ایک جواری کی طرح لٹاچکاہوں
آخری سانس تک گروی رکھ کر
زندگی کے معاہدے پر دستخط کرچکا ہوں

میں
سیاہ سرمائے کی سلطنت میں
امید کا روزنامچہ لکھ رہا ہوں
کہ
وبا کے دن
اور
موت کا خوف
ہر دروازے پر دستک دے رہا ہے
مگر بھوک کا ذائقہ
میں اور میرے بچے ہی کیوں چکھ رہے ہیں

Comments are closed.