سیمینار:بلوچی ادب میں پاکستانیت کا اظہار

بلوچی ادب میں تحریک پاکستان، آزادی اور پاکستان سے وفاداری کا اظہار ملتا ہے۔ پروفیسر ڈاکٹر زینت ثناء
بلوچی زبان نے اردو ادب کی تمام اصناف سے بھر پور استفادہ کیا ہے۔ ڈاکٹرغلام قاسم مجاہد بلوچ
بلوچی ادب کی تمام اصناف میں وطن سے وفااور محبت کا خوبصورت اظہار ملتا ہے۔پروفیسر ڈاکٹر خشک
اسلام آباد(پ۔ر) بلوچی ادب کی تمام اصناف میں وطن سے وفااور محبت کا خوبصورت اظہار ملتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین اکادمی نے اکادمی ادبیات پاکستان کے زیر اہتمام، پاکستان کی ڈائمنڈ جوبلی تقریبات کے سلسلہ کی نوویں تقریب ”بلوچی ادب میں پاکستانیت کا اظہار“ کے موضوع پر منعقدہ سیمینارمیں ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کیا۔ مجلس صدارت میں ڈاکٹرغلام قاسم مجاہد بلوچ(ڈیرہ غازی خان) اور پروفیسر ڈاکٹر زینت ثناء(کوئٹہ)شامل تھے۔ ڈاکٹر واحد بخش بزدار(اسلام آباد) مہمان خاص تھے۔ کریم بخش زوراخ بزدار(کوہ سلمان) مہمان اعزاز تھے۔ رخشندہ تاج(اسلام آباد)، طارق رحیم بلوچ(تربت)، شکور زاہد(کوئٹہ)اور تنویر ودار(تربت)نے موضوع کی مناسبت سے اظہار خیال کیا۔ نظامت ڈاکٹر ضیاء الرحمن بلوچ نے کی۔ ڈاکٹر یوسف خشک،چیئرمین اکادمی نے کہاکہ قیام پاکستان سے قبل اور بعد میں بلوچی زبان میں امن، آزادی، حریت، شجاعت اور دھرتی سے محبت کا اظہار ملتا ہے۔ قومی یک جہتی اور ووطن سے محبت کا اظہار بلوچی شعراء کے ساتھ ساتھ نثر نگاروں نے بھی اپنے خوبصورت اسلوب میں کیا ہے۔ بلوچی ادب کی تمام اصناف میں وطن سے وفااور محبت کا خوبصورت اظہار ملتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بلوچی زبان کے رسالوں ماہنامہ ”اومان“، ماہنامہ”بلوچی“ اور ماہنامہ”الس“ اور بلوچی اکیڈمی نے بلوچی نثر میں پاکستانیت کو اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ شیر محمد مری، مراد ساحر، نسیم دشتی، نعت اللہ گچگی، عبد الغفار گچکی، عصمت اللہ جمالدینی، صورت خان مری ویگر نثر نگاروں نے بلوچی نثر میں وطن سے محبت اور معاشرے میں مساوات کے حوالے سے لکھا۔ اسی طرح بلوچی شعراء نے اپنے اپنے انداز میں جذبہ حب الوطنی سے لبریز خوبصورت شاعری کی۔ ان شعراء میں میر گل خان نصیر، آزاد جمالدینی، عطا شاد، اکبر بارکزی، کریم دشتی، قاضی عبد الرحیم، غوث بخش صابر، الفت نسیم اور محمد حسین عنقا و دیگر شعراء شامل ہیں۔ پروفیسر ڈاکٹر زینت ثنانے کہا کہ بلوچی ادب میں مزاحمت کے باوجود تحریک پاکستان، آزادی اور پاکستان سے وفاداری کا بھر پور اظہار ملتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام پاکستانی زبانوں کو ایک نظر سے دیکھنا چاہیے اور ہر صوبے میں تما م پاکستانی زبانوں کو پڑھانے، سکھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہاکہ بچوں اور خواتین کے ادب کے فروغ سے ملکی یک جہتی اور پاکستانیت کاتصور اجاگر کیا جاسکتا ہے۔ ڈاکٹرغلام قاسم مجاہد بلوچ نے کہاکہ بلوچی زبان محبت کی شاعری ہے جس میں پاکستانیت کا عکس نمایاں ہے۔ بلوچی زبان کا رسم الخط، تاریخی مقامات کے نام، مختلف اصطلاحات، ہیت سب اردوکے ذریعے آئے ہیں۔ بلوچی زبان نے اردو ادب کی تمام اصناف سے بھر پور استفادہ کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ بلوچی شعرو ادب وطن سے محبت اور انسان دوستی سے بھر ا پڑا ہے۔ ڈاکٹر واحد بخش بزدار نے کہا کہ بلوچی ادب میں قائداعظم، علامہ اقبال اور وطن دوستی کے حوالے سے بہت مواد موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ ادب تو نجات کا ذریعہ ہے، ہمیں رنگ، نسل، ذات پات سے بلند ہو کر سوچنا چاہیے۔ عالمگیریت کی سوچ کواپنانے کی ضرورت ہے اسی میں پاکستانیت کا تصور موجود ہے۔ کریم بخش زوراخ بزدار نے کہا کہ عطاء شاد، میر گل خان نصیر و دیگر شعراء نے وطن اور مٹی سے محبت کی بھر پور شاعری کی ہے۔ بلوچی کے تمام اہل قلم نے وطن سے محبت اور انسان دوستی کے حوالے سے شاعری کی ہے۔ طارق رحیم بلوچ نے کہاکہ مراد ساحر، صورت خان مری، غوث بخش صابرو دیگر بے شمار شعراء نے اپنی شاعری میں پاکستانیت کو اُجاگر کیا ہے۔ رخشندہ تاج نے کہا کہ بلوچی زبان وادب میں پاکستانیت کے اظہار کے حوالے سے بلوچی اکیڈمی کراچی، بلوچی اکیڈمی، کوئٹہ، ماہنامہ ”الس“ کا کردار بہت نمایاں رہا ہے۔ تنویر ودار نے کہا کہ وطنیت کے اظہار کے سلسلے میں رسالہ ماہنامہ ”اومان“ اور ریڈیو، ٹیلی وژن نے کردار ادا کیا ہے۔ شکور زاہد نے کہاکہ بلوچی ادب میں وطن سے محبت کا بھر پور اظہار ملتا ہے۔ عطاء شاد، میرگل خان نصیرآزادجمالدینی کی شاعری میں انسان دوستی اور پاکستانیت کا اظہار ملتا ہے۔

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Balochi literature expresses loyalty to Tehreek-e-Pakistan, Azadi and Pakistan. Prof. Dr. Zeenat Sana

The Balochi language has made full use of all genres of Urdu literature. Dr. Ghulam Qasim Mujahid Baloch

In all genres of Balochi literature, there is a beautiful expression of loyalty and love for the homeland. Prof. Dr. Yousaf Khushk

Islamabad (PR) In all genres of Balochi literature, there is a beautiful expression of loyalty and love for the homeland. These views were expressed by Dr. Yousuf Khushk, Chairman, Academy, Pakistan, while presenting the Key-Note Address of the ninth program of the Diamond Jubilee Celebrations of Pakistan, , in a seminar on “Expression of Pakistaniness in Balochi Literature”. organized by the PAL

The Presidium consisted of Dr. Ghulam Qasim Mujahid Baloch (Dera Ghazi Khan) and Prof. Dr. Zeenat Sana (Quetta). Dr. Wahid Bakhsh Bazdar (Islamabad) was the special guest. Karim Bakhsh Zorakh Bazdar (Koh-e- Salman) was the guest of honor. Rakhshinda Taj (Islamabad), Tariq Rahim Baloch (Turbat), Shakur Zahid (Quetta) and Tanveer Wadar (Turbat) expressed their views. Moderator was the Dr. Zia-ur-Rehman Baloch.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman,PAL, said that before and after the establishment of Pakistan, the Balochi language expresses love for peace, freedom, liberty, courage and the land. Baloch poets as well as prose writers have expressed their love for national unity and patriotism in their beautiful style. In all genres of Balochi literature, there is a beautiful expression of loyalty and love for the homeland.

He said that Balochi language magazines Oman, Balochi and Als and Balochi Academy have played an important role in highlighting Pakistaniness in Balochi prose.

Sher Muhammad Marri, Murad Sahir, Naseem Dashti, Naatullah Gachgi, Abdul Ghaffar Gachki, Ismatullah Jamaldini, Surat Khan Marri Weiger prose writers wrote in Balochi prose with reference to love of homeland and equality in society.

Similarly, Balochi poets wrote beautiful poetry in their own style full of patriotism.

These poets include Mir Gul Khan Naseer, Azad Jamaldini, Ata Shad, Akbar Barakzai, Karim Dashti, Qazi Abdul Rahim, Ghous Bakhsh Sabir, Ulfat Naseem and Muhammad Hussain Anka and others.

Prof. Dr. Zeenat Sana said that despite the resistance in Balochi literature, there is full expression of loyalty to Tehreek-e-Pakistan, Azadi and Pakistan. He said that all Pakistani languages should be looked at at a glance and all Pakistani languages need to be taught in every province.

She said that with the promotion of children’s and women’s literature, the concept of national unity and Pakistaniness could be highlighted.

Dr Ghulam Qasim Mujahid Baloch said that Balochi language is poetry of love in which the reflection of Pakistaniness is prominent. Balochi script, names of historical places, various terms, all have come through Urdu. The Balochi language has made full use of all genres of Urdu literature. He said that Balochi poetry is full of love for patriotism and philanthropy.
Dr. Wahid Bakhsh Bazdar said that there is a lot of material in Balochi literature regarding Quaid-e-Azam, Allama Iqbal and patriotism. He said that literature is the source of salvation, we should think beyond color, race and caste. The idea of globalization needs to be adopted. This is where the concept of Pakistaniness lies.
Karim Bakhsh Zorakh Bazdar said that Ata Shad, Mir Gul Khan Naseer and other poets have written poetry full of love for homeland and soil. All Balochi writers have written poetry on patriotism and philanthropy.
Tariq Rahim Baloch said that Murad Sahir, Surat Khan Murree, Ghous Bakhsh Sabro and many other poets have highlighted Pakistaniness in their poetry.
Rakhshanda Taj said that the role of Balochi Academy Karachi, Balochi Academy, Quetta, monthly Als has been very significant in expressing Pakistaniness in Balochi language and literature.
Tanveer Wadar said that the monthly magazine “Oman” and radio and television have played a role in expressing patriotism.

Comments are closed.