عالمی عید ملن مشاعرے کا انعقاد

موجودہ چیئرمین نے اکادمی کو بہت متحرک کر دیا ہے ، ان کی کوششوں سے پاکستان چائنا اکنامک کاریڈور کے بعد ڈاکٹر خشک کی کوششوں سے پاک چائنا لٹریری کاری ڈور ممکن ہو سکا ہے۔ ڈاکٹر وحید احمد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام آن لائن عالمی عید ملن مشاعرہ منعقد ہوا۔صدارت ڈاکٹر وحید احمد (اسلام آباد)نے کی۔ سورج نارائن(کوہاٹ)، منصور آفاق(لاہور)، صابر رضا(مانچسٹر)اور غضنفر ہاشمی (امریکہ) مہمانان خصوصی تھے۔ ڈاکٹر شائستہ نزہت(لاہور)، اعجاز کنورراجہ(لاہور)، سعد اللہ شاہ (لاہور)، کبیر اطہر(رحیم یار خان)، الطاف بخاری(امریکہ)، محسن شکیل(کوئٹہ)، علی ارمان(برطانیہ)، شفقت اللہ مشتاق(بہاولنگر) اور عارف افضل عثمانی مہمانان اعزاز تھے۔ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین، اکادمی ادبیات پاکستان ،نے ابتدائیہ پیش کیا۔ مشاعرے میں ملک بھر اور بیرون ملک سے شعراءکرام نے اپنا کلام پیش کیا۔ نظامت شہزاد بیگ نے کی۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے تمام ملکی اور غیر ملکی شعراءکا اکادمی کی طرف سے بطور چیئرمین شکریہ ادا کیاکہ انہوں نے اکادمی کی دعوت کوقبول کیا اور اس مشاعرے میں شر کت کی۔ انہوں نے کہا کہ خاص طور پر رمضان المبار ک کے مہینے میں عالمی حمدیہ اور نعتیہ مشاعرے منعقد کیے جس میں اردوزبان کے ساتھ پنجابی، سندھی، پشتو، پوٹھوہاری،سرائیکی، بلوچی، براہوئی، ہندکو، کشمیری، کھوار،گوجری پہاڑی، وخی،شینا،بروشسکی اوربلتی میں بھی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے پورے رمضان میں منعقد کیے گئے۔اس کے بعد خواتین کاعالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا اور آج آپ اکابرین علم و دانش کی شفقت ،محبت اور تعاون کی بدولت ہی اکادمی نے عید ملن عالمی مشاعرہ کا انعقاد کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ پچھلے ایک سال سے یہ دنیا جس طرح کوڈ کا سامنا کر رہی ہے ، جس میں پاکستان بھی شامل ہے اور اب اس وبا کی تیسری خطر ناک لہر سے ہم لوگ نبر د آزما ہیں۔ اس سے قبل لوگوں نے اس طرح کی وبا کا سامنا نہیں کیا تھا۔ میں خراج تحسین پیش کرتا ہوں ان ادیبوں، شاعروں اور اہل قلم حضرات کو جن کے ہاتھ میں قلم تھاانہوں نے مایوس کن صورتحال میں جس میں پورا معاشرہ انتہائی بے چینی کی کیفیت میں مبتلا تھا ہمارے ان انسان دوست اہل قلم نے معاشرے میں وبا کے خلاف ہراول دستے کا کردار ادا کیا۔ انہوں نے قلم کے ذریعے اپنی شاعری ، مضامین اور کالموں کے ذریعے نہ صرف لوگوں کا حوصلہ بڑھایا بلکہ ان میں جینے کی امنگ پیدا کی۔ ہمارے اہل قلم نے سماج میں اپنی خدمات انجام دینے والے ڈاکٹروں، رضاکاروں ودیگر سماجی کارکنوں کا بھی حوصلہ بڑھایا۔ ادیبوں کے اس کردار کو عالمی سطح پر بھی سراہا گیا ہے۔ بلاشبہ وہ خراج تحسین کے مستحق ہیں۔ ادیبوں کا یہ کردار ناقابل فراموش ہے۔ اس موقع پر ڈاکٹر یوسف خشک نے کہا کہ اکادمی ادبیات پاکستان نے کووڈ کے باوجود کئی ممالک کے ساتھ سمجھوتے کیے ہیں اور خصوصا جو چائنا کے ساتھ سمجھوتہ ہوا اس کے تحت 100 پاکستانی کتب چائنیز زبان میں ترجمہ ہوںگی۔ مزید کہاکہ امید زیست ایوارڈ کے تحت جو شاعری موصول ہوئی وہ بہت جلد شائع ہوگی جس میں ہمارے سینئر اور نوجوان شعرا نے نظمیں، غزلیں اور دیگر اصناف میں اپنی تخلیقات بھیجی ہیں یہ کتاب وبا کے دور میں انسانی زندگی کی بدلتی صورتحال کی بھر پور عکاسی کرے گی اور امید ہے یہ کتاب ادبی دستاویز کی حیثیت حاصل کرے گی ۔مشاعرے کے صدر ڈاکٹر وحید احمد نے اپنی گفتگو میں مشاعرے کو کامیاب و یادگار قرار دیتے ہوئے کہا کہ موجودہ چیئرمین نے اکادمی ادبیات کو بہت متحرک بنا دیا ہے ، کووڈ کے باوجود پبلیکشنز اور پرواگرمز کا منعقد ہونا ان کی اپنے شعبے سے محبت کی علامت ہے۔ پاکستان چائنا اکنامک کاریڈور کے بعد ڈاکٹر یوسف خشک کی کوششوں سے پاک چائنا لٹریری کاری ڈور ممکن ہو سکا ہے جو ایک بڑی کامیابی ہے۔ مشاعرے میں اشرف یوسفی(فیصل آباد)، مقصود وفا(فیصل آباد)، اظہر فراغ(بہاولپور)، فیصل ہاشمی(خانیوال)، رفیق احمد خاں(حیدر آباد)، انجم سلیمی(فیصل آباد)، خالد سجاد(کویت)، قمر ریاض(مسقط)، ڈاکٹر شفیق آصف(سرگودھا)، صائمہ آفتاب(لاہور)، عذرا ناز(لندن)، استوتی اگروال(ہندوستان)، شاہد زمان(کوہاٹ)، صائمہ نورین بخاری(ملتان)، رباب تبسم(اسلام آباد)، ڈاکٹر عارف فرہاد(اسلام آباد)، منان قدیر منان(لندن)، نیل احمد(کراچی)، نیلم ملک(لاہور)، ڈاکٹر شمع افروز(کراچی)، تسلیم اکرام(اسلام آباد)، احسان شاہ(گلگت)، میاں آفتاب احمد(فیصل آباد)، رمزی آثم(کراچی)، اعجاز احمد(دوحہ)، ہارون عدیل(پشاور)، مبشر سعید(ساہیوال)، شیراز غفور(ڈیرہ غازی خان)، حسن مسعود(میانوالی)، مجدد الارض(خیر پور)، عقیل شاہ(اسلام آباد)، ثنائ اللہ ظہیر(فیصل آباد)، ڈاکٹر شاہد اشرف(فیصل آباد)، دانش عزیز(لاہور)، محمود رضا سید(فیصل آباد)، کاشف عرفان(اسلام آباد)، عرفان عارف(جموں کشمیر)، ابھیشک شکلہ(ہندوستان)، محمد افضل(لاہور)، کاشف رحمان(ڈیرہ اسماعیل خان)، طاہر شیرازی(ڈیرہ اسماعیل خان)، ڈاکتر ضیغم خان(ڈیرہ اسماعیل خان)، غزالی (گوجرہ)، اویس سجاد اویس(بہاولپور)، فوزیہ شیخ(فیصل آباد)، اطہر ضیائ(اسلام آباد)، صغیر اسلم(مانسہرہ)اور دیگر نے اپناکلام پیش کیا۔

آن لائن عالمی عید ملن مشاعرے کے شرکا

Press Release

The current chairman has made the PAL very dynamic through his efforts, after the Pakistan-China Economic Corridor,
Dr. Yousuf Khushk’s efforts have made the Pak-China Literary Corridor possible. Dr. Waheed Ahmed

ISLAMABAD (P.R): An International Eid Millan Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters(PAL). Mushaira presided over by Dr. Waheed Ahmed (Islamabad). Suraj Narain (Kohat), Mansoor Afaq (Lahore), Sabir Raza (Manchester) and Ghazanfar Hashmi (USA) were the chief guests. Dr. Shaista Nuzhat (Lahore), Ejaz Kanwar Raja (Lahore), Saadullah Shah (Lahore), Kabir Athar (Rahim Yar Khan), Altaf Bukhari (USA), Mohsin Shakeel (Quetta), Ali Arman (UK), Shafqatullah Mushtaq ( Bahawalnagar) and Arif Afzal Osmani were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Poets from all over the country and abroad presented their poetry. Shehzad Baig was the moderator.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, in his introductory remarks, on behalf of the
PAL, thanked all the national and foreign poets on behalf of the PAL for accepting the invitation of the PAL and participating in the poetry recital.

He said that especially in the month of Ramadan-ul-Mubarak, two international Hamdiya and Naatiya Mushairas were organized in which poets presented their poetry in Urdu language.

This was followed by Hamdiya and Naatiya poetry recitals in other languages like Punjabi, Sindhi, Pashto, Pothohari, Seraiki, Balochi, Brahui, Hindko, Kashmiri, Khwar, Gojri Pahari, Wakhi, Sheena, Broshki, Balti. This was followed by the International Women’s Hamdiya and Naatiya Poetry. And today, thanks to the compassion, love and cooperation of your great knowledge and wisdom, the PAL has organized an International Eid Millan Mushaira. He said that there is no doubt that the world has been facing the same covid for the last one year, including Pakistan and now we are facing the third dangerous wave of this epidemic.
People had never faced such an epidemic before. I pay tribute to the writers, poets and writers who had pens in their hands in a depressing situation in which the whole society was in a state of extreme anxiety, played the role of vanguard.
Through his poetry, essays and columns, he not only encouraged people but also instilled in them a desire to live. Our writers also encouraged the doctors, volunteers and other social workers who rendered their services to the society. This role of writers has also been appreciated globally. This role of writers is unforgettable.

On the occasion, Dr. Yousuf Khushk said that the PAL has entered into agreements with many countries despite the covid and especially under the agreement reached with China, 100 Pakistani books will be translated into Chinese.

He further said that the poetry received under “Omid Zeest Award” will be published soon in which our senior and young writers have sent their creations in poems, ghazals and other genres. Hopefully this book will become a literary document.

Dr. Waheed Ahmed, President of Mushaira, in his speech termed Mushaira as successful and memorable and said that the present Chairman has made the PAL very dynamic. Despite the covid, holding publications and programs is a sign of their love for their field. After the Pakistan-China Economic Corridor, the efforts of Dr. Yousuf Khushk have made the Pak-China Literary Corridor a great success.
Participants of the Mushaira included Ashraf Yousufi (Faisalabad), Maqsood Wafa (Faisalabad), Azhar Farag (Bahawalpur), Faisal Hashmi (Khanewal), Rafiq Ahmad Khan (Hyderabad), Anjum Salimi (Faisalabad), Khalid Sajjad (Kuwait), Qamar Riaz ( Muscat), Dr. Shafiq Asif (Sargodha),

Saima Aftab (Lahore), Azra Naz (London), Astuti Agrawal (India), Shahid Zaman (Kohat), Saima Noorin Bukhari (Multan), Rabab Tabassum (Islamabad), Dr. Arif Farhad (Islamabad), Manan Qadeer Manan ( London), Neil Ahmed (Karachi), Neelam Malik (Lahore), Dr. Shama Afroz (Karachi), Taslim Ikram (Islamabad), Ehsan Shah (Gilgit), Mian Aftab Ahmed (Faisalabad), Ramzi Atham (Karachi), Ejaz Ahmed (Doha), Haroon Adeel (Peshawar), Mubashir Saeed (Sahiwal), Shiraz Ghafoor (Dera Ghazi Khan), Hassan Masood (Mianwali), Mujaddid Al-Arz (Khairpur), Aqeel Shah (Islamabad), Sanaullah Zaheer (Faisalabad), Dr. Shahid Ashraf (Faisalabad), Danish Aziz (Lahore), Mahmood Raza Syed (Faisalabad), Kashif Irfan (Islamabad), Irfan Arif (Jammu and Kashmir), Abhishek Shukla (India), Muhammad Afzal (Lahore), Kashif Rehman (Dera Ismail Khan), Tahir Shirazi (Dera Ismail Khan), Dr. Zaigham Khan (Dera Ismail Khan), Ghazali (Gojra), Owais Sajjad Owais (Bahawalpur), Fauzia Sheikh (Faisalabad), Athar Zia (Islamabad), Saghir Aslam (Mansehra) and others presented their poetry.

Comments are closed.