براہوئی عالمی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن براہوئی عالمی حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔ صدارت جوہر براہوئی (دادو) نے کی۔ پروفیسر عبد الرزاق صابر (کوئٹہ )مہمان خصوصی تھے۔ نور خان محمد حسنی(کوئٹہ)، پروفیسر سوسن براہوئی(کوئٹہ)، استاد محبوب عاجز(قطر) اور سائل مینگل(قطر) مہمانان اعزاز تھے۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان، نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت قیوم بیدار(کوئٹہ) اور نذیر شاکر براہوئی(شکارپور) نے کی۔ مشاعرے میں ملک بھر اور بیرون ملک سے شعراءنے حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ دیگرپاکستانی زبانوں کی طرح براہوئی میں بھی حمد کی روایت قدیم دور سے موجود ہے ۔ حمد لوک ادب سے لے کر جدید براہوئی شاعر ی میں ایک خاص رچاﺅ اور عقیدت کے جذبے کے طور پر موجود ہے ۔ براہوئی ادب میں حمد ونعت کی روایت کا اگر جائزہ لیا جائے تو نعت ہمارے فوک لور سے لے کر کلاسیکل ادب اور قدیم شاعرانہ روایت کا حصہ رہا ہے ۔ تحریری ادب میں پہلی بار حمد و نعت ملا ملک داد کلاتی کی کتاب ”تحفتہ العجائب“(1760)میں اور اس کے بعد 1870ءمیں مولانا عبد الحکیم مشوانی کے قلمی نسخے ، دیوان ”چار باغ“ کے براہوئی حصے میں لغت ایک اچھے رنگ میں نظر آتی ہے ۔ عشق الٰہی اور عشق رسول کا ایک بہترین نمونہ ہمیں براہوئی کے نامور صوفی شاعر تاج محمد تاجل کے کلام میں نظر آتا ہے۔ تاجل کاکلام تصوف کا رنگ لئے موجود ہے ۔ فنا فی اللہ و فنا فی الرسول کی ایک واضع جھلک ہمیں تاج محمد تاجل کے علاوہ فیض محمد فیضل فقیر کے کلام میں بھی نظر آتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایسے ہی مکتب درخانی کے علماءسے حمد و نعت کی روایت کو اپناتے ہوئے باقاعدہ طور پر لغت گوئی پر کتابیں شائع کیں ۔ ان میں عبد المجید چولوئی کی کتاب ” جوش حبیب، مولانا محمد عمر دین پوری کی کتاب ”شمائل شریف“، مشتاق مدینہ ، فی الفراق، بیض الطیب فی ذکر حبیب و دیگر کتب شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسی طرح مکتبہ درخانی ہی کے ایک اور عالم مولانانبو جان کی ”تحفتہ الغرائب“ و ”نصیحت نامہ“ہیں۔ براہوئی کی پہلی خاتون شاعرہ مائی تاج بانو کی دیگر کتب کے علاوہ اُن کی کتاب تسویخ النسواں“میں بھی نعتیہ اشعار موجود ہیں۔ انہوں نے کہاکہ اسی طرح قیام پاکستان کے بعد اور موچون کے دورکے شعراءمیں یہ روایت بڑی عقیدت مندی کے ساتھ موجود ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شاعری کی کسی بھی صنف کے مجموعہ کلام میں براہوئی کی شاعری کی ہر کتاب کی ابتداءحمدیہ اور نعتیہ شاعری سے ہوتی ہے۔ براہوئی میں جن شعراءنے حمدو نعت گوئی پر باقاعدہ کتابیں شائع کی ہیں ان میں علامہ جوہر براہوئی کی کتاب ”روشنائی“، پیرل زُبیرانی کی کتاب”تجلی“، غم خوار حیات کی کتاب”ورد“، عبد الصمد سورابی کی ترجمہ کردہ کتاب ”فخر کونین“، محمد علی شاہ کی ”خوشبو ناسفر“ اور نعت گوئی کی تاریخ اور روایت کے تذکرے کے ساتھ ’کتاب’نعت نا سفر “،حسین بخش ساجد کی کتاب ”تجلّا نورنا“، ضیاءجان کا مجموعہ ”دُرِ عرب“، مولانا رشید ہمدم کی ”بختاورا توشہ“، خالد اسیر کی ’‘’سرتاج مدینہ “ودیگر شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ براہوئی کے جدید اور نعت گو شاعر صابر ندیم نے حمدیہ و نعتیہ کلام کے علاوہ اسمائے رسول اللہ پر مبنی شاعری میں نمایاں کام کیا ہے۔ اس کے علاوہ مولونا یعقوب شرودی، شاہ بیگ شیدا، استاد حسین غمخوار، پروفیسر صالح محمد شاد، مولانا عبد الخالق ابابکی کے عقیدت کے کلام نے براہوئی حمدیہ نعتیہ شاعری کو اونچا مقام دلانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔مشاعرے میں حسین شہزاد(مستونگ)، ذوق براہوئی(خضدار)، مہر زاہد نالوی(نال )، احمد مہر(عمان)، زاہد براہوئی(اسلام آباد)، چاکر براہوئی(لاڑکانہ)، اکبر نسیم (منگچر)، ظہور زیب براہوئی(قلات)، عبد العزعز بزنجو(سعودی عرب)، نور الدین مینگل(سعودی عرب)، سعد اللہ سعد(قطر)، پروفیسر حفیظ سرپرہ(کوئٹہ)، عمران فریق(بحرین)، عبد المنان محمد حسنی(سعودی عرب)، ڈاکٹر اعظم بنگلزئی(کوئٹہ)، ڈاکٹر عالم عجیب مینگل(نوشکی)، پروفیسر انجم براہوئی(سوراب)، حسین بخش ساجد (کوئٹہ)، حنیف مزاج(کوئٹہ)، یوسف نسیم(کوئٹہ)، حمید عزیز آبادی (مستونگ)، نیلم مُومَل(کوئٹہ)، جہاں آرا تبسم (کوئٹہ )،نذیر شاکربراہوی (شکارپور) اور دیگرنے براہوئی میں حمدیہ و نعتیہ کلا م پیش کیا۔


آن لائن براہوئی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کے شرکا


آن لائن براہوئی حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کے شرکا

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad (P.R): In the Holy month of Ramadan-ul-Mubarak, an online Brahvi International Hamdiya & Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). Mushaira presided over by Johar Brahvi (Dadu). Prof. Abdul Razzaq Sabir (Quetta) was the Chief Guest. Noor Khan Mohammad Hassani (Quetta), Prof. Susan Brahvi (Quetta), Ustad Mehboob Aajez (Qatar) and Sail Mengal (Qatar) were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Qayyum Bedar (Quetta) and Nazir Shakir Brahvi (Shikarpur) were the moderators. Poets from all over the country and abroad recited Hamdiya and Naatiya poetry.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, in his introductory remarks, said that Brahvi, like other Pakistani languages, has a tradition of Hamad from ancient times. Hamad is present in everything from folk literature to modern Brahvi poetry as a special creation and a spirit of devotion. If we look at the tradition of Hamad and Naat in Brahvi literature, then Naat has been a part of our folklore, classical literature and ancient poetic tradition.
Hamade and Naat were first found in written literature in Malik Dad Kalati’s book “Tahafta-e-Ajaib” (1760) and then in 1870 by Maulana Abdul Hakim Mashwani. The dictionary appears in a good color in the Brahvi section of the Diwan “Char Bagh”. An excellent example of divine love and love of the Prophet can be seen in the words of the famous Brahvi Sufi poet Taj Muhammad Tajal. Tajal’s poetry exists for the color of Sufism. We see a clear glimpse of Fana Fi Allah and Fana Fi Rasool in the words of Taj Muhammad Tajil as well as in the words of Faiz Muhammad Faizal Faqir.

He said that adopting the tradition of Hamad and Naat from the scholars of such Maktab Durkhani, he regularly published books on Naatiya poetry. These include Abdul Majeed Choloi ‘s book “Josh Habib”, Maulana Muhammad Omar Din Puri’s book “Shamail Sharif”, “Mushtaq-e- Madina”, “Fi Al-Faraq”, Baiz-ul-Tayyib”, “Fi Zikr-e-Habib” and other books.

He said that similarly, another scholar of Maktab-e-Durkhani is Maulana Nabu Jan’s “Tohfat-ul-Gharaib” and “Naseehat Nama”. In addition to other books by Brahvi’s first female poetess, Mai Taj Bano, her book, Tasweekh- ul-Niswan”, also contains Naatiya poems.
He said that similarly this tradition is present in the poets of post-Pakistan with great devotion. He said that every book of Brahvi’s poetry in any genre of poetry begins with Hamadiya and Naatiya poetry.
Poets in Brahvi who have published regular books on Hamad-o-Naat recitation among them are Allama Johar Brahvi’s book “Roshanai”, Pearl Zubairani’s book “Tajalli”, Gham Khwar Hayat’s book “Wird”, Abdul Samad Sorabi’s translated book “Fakhr-e- Koneen”, Muhammad Ali Shah’s “Khushbo Nasfar” and the book ‘Naat Na Safar’ with reference to the history and tradition of Naat recitation, Hussain Bakhsh Sajid’s book ‘Tajla Noorna’, Zia Jan’s collection ‘Dur-e-Arab’, Maulana Rashid Hamdam’s’ Bakhtawara Tosha ‘, Khalid Asir’s’ “Sartaj Madina” and others.
He said that apart from this, the modern and Naat-speaking poet of Brahvi, Sabir Nadeem, has done significant work in poetry based on the names of the Holy Prophet (PBUH) apart from the Hamad and Naat. In addition, the words of devotion of Maulana Yaqub Shrodi, Shah Beg Sheeda, Ustad Hussain Ghamkhwar, Prof. Saleh Mohammad Shad, Maulana Abdul Khaliq Ababki have played an important role in elevating the Brahvi Hamdiya & Naatiya poetry.
Participants of Mushaira included Hussain Shehzad (Mastung), Zauq Brahvi (Khuzdar), Mehr Zahid Nalvi (Naal), Ahmad Mehr (Oman), Zahid Brahvi (Islamabad), Chakar Brahvi (Larkana), Akbar Naseem (Mangchar), Zahoor Zeb Brahvi ( Qalat), Abdul Aziz Bizenjo (Saudi Arabia), Nooruddin Mengal (Saudi Arabia), Saadullah Saad (Qatar), Prof. Hafeez Sarpara (Quetta), Imran Fariq (Bahrain), Abdul Manan Muhammad Hassani (Saudi Arabia), Dr. Azam Bangalzai (Quetta), Dr. Alam Ajib Mengal (Noshki), Prof. Anjum Brahvi (Surab), Hussain Bakhsh Sajid (Quetta), Hanif Mazaj (Quetta), Yousuf Naseem (Quetta), Hameed Aziz Abadi (Mastung), Neelam Momal (Quetta) ), Jahan Ara Tabassum (Quetta), Nazir Shakir Brahvi(Shikarpur) and others presented Hamdiya and Naatiya poetry in Brahvi language.

Comments are closed.