خواتین کے حمدیہ و نعتیہ مشاعرے کا انعقاد

اسلام آباد(پ۔ر)اکادمی ادبیا ت پاکستان کے زیر اہتمام رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں آن لائن خواتین کا حمدیہ ونعتیہ مشاعرہ منعقد ہوا۔ صدارت ثروت محی الدین(لاہور)نے کی۔ ڈاکٹر سحر امداد حسینی(کراچی)، نجمہ منصور(سرگودھا) اور یاسمین سحر(جہلم) مہمانان خصوصی تھیں۔ عابدہ تقی(اسلام آباد)، بینا گویندی(امریکہ) اور ڈاکٹر سیدہ آمنہ بہار(مظفر آباد) مہمانان اعزازتھیں۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی ادبیات پاکستان، نے ابتدائیہ پیش کیا۔ نظامت عائشہ مسعود نے کی۔ مشاعرے میںملک بھر اور بیرون ملک سے شاعرات نے حمدیہ و نعتیہ کلام پیش کیا۔ ڈاکٹر یوسف خشک، چیئرمین ، اکادمی نے ابتدائیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ماں کی گو د ہی بچے کی پہلی درسگاہ ہوتی ہے جس سے بچے صحیح معنوں میں تربیت پاتے ہیں۔ بچوں کو اسلام اور اسلامی تہذیب و تمد ن سے روشناس کرانے میں خواتین کا کردار نمایاں رہا ہے جس کو تاریخ نے مختلف ادوار میں پیش کیا ہے ۔ شاعری کے حوالے سے تاریخی گواہیاں دیکھی جائیں توخا ص طور پر جہانگیر کی بیگم نورجہاں کے کلام میں نعتیہ اشعار ہمیں ملتے ہیں۔اورنگزیب عالمگیر کی بیٹی زیب النساءکی شاعری میں بھی حمدیہ و نعتیہ اشعار ملتے ہیں۔اس موقع پر میر تقی میر کی بیٹی کا تذکر ہ بھی ضروری ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں 72زبانیں بولی جاتی ہیں اور ان زبانوں میں جہاں ماں کی لوریاں ملتی ہیں وہاں حمدو نعت بھی ملتی ہے، یہ ایک بڑی تاریخ ہے جس پرمزید کام کر نے کی ضررورت ہے ۔خواتین شاعرات کے حوالے سے حمدو نعت کی ایک مضبوط روایت موجود ہے۔ بلاشبہ شاعرات کا حمدو نعت میں بہت بڑا حصہ ہے جو واقعی قابل ستائش ہے۔ مشاعرے میں ایمان قیصرانی(ڈیرہ غازی خان)، ثمینہ قادر(پشاور)، ثمینہ گل (سرگودھا)، جہاں آرا ءتبسم (کوئٹہ)، رخسانہ صبا(کراچی)، رفعت وحید(رفعت وحید)، سبین یونس(امریکہ)، سحرعلی(کراچی)، شاہدہ سردار(پشاور)، شفقت حیات(ٹیکسلا)، صبا جاوید(پشاور)، عرفانہ امر(گوجرانوالہ)، غزالہ غزل(پشاور)، فرح اسد(پشاور)، قدسیہ قدسی(ملائشیا)، کومل جوئیہ (کبیروالا)، محمودہ غازیہ(اسلام آباد)، مقصودہ حسین(راولپنڈی)، نسیم نازش(پشاور) اور دیگرخواتین شاعرات نے حمدیہ و نعتیہ کلا م پیش کیا۔


آن لائن خؤاتین کے حمدیہ و نعتیہ مشاعرہ کی شرکا

Pakistan Academy of Letters, Islamabad

Press Release

Islamabad (P.R): In the Holy month of Ramadan-ul-Mubarak, an online women’s Hamdiya and Naatiya Mushaira was organized by the Pakistan Academy of Letters (PAL). Musharia presided over by Sarwat Mohi-ud-Din (Lahore). Dr. Sehar Imdad Hussaini (Karachi), Najma Mansoor (Sargodha) and Yasmeen Sehar (Jhelum) were the chief guests while Abida Taqi (Islamabad), Bina Govindi (USA) and Dr. Syeda Amna Bihar (Muzaffarabad) were the guests of honor. Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, gave the introductory speech. Ayesha Masood was the moderator. Poetess from all over the country and abroad recited Hamdiya and Naatiya poetry.

Dr. Yousuf Khushk, Chairman, PAL, while giving the introductory speech said that mother’s lap is the child’s first school from which the children are truly trained.

The role of women has been significant in introducing children to Islam and Islamic civilization, which history has shown in different periods. Let us look at the historical testimonies regarding poetry. In particular, we find Naatiya poetry in the words of Jahangir’s Begum Noor Jahan. Hamdiya & Naatiya poetry also found in the poetry of Aurangzeb Alamgir’s daughter Zeb-un-Nisa. It is also important to mention Mir Taqi Mir’s daughter on this occasion.

He said that 72 languages are spoken in Pakistan and in those languages where mother’s lullabies are found there is also Hamdo Naat. This is a great history that needs to be worked on further. There is a strong tradition of Hamdo Naat regarding female poets. Undoubtedly, the poetesses have a big part in the Hamad-o- Naat which is really commendable.

Participants of Mushaira included Iman Qaisarani (Dera Ghazi Khan), Samina Qadir (Peshawar), Samina Gul (Sargodha), Jahan Ara Tabassum (Quetta), Rukhsana Saba (Karachi), Rafat Waheed (Rafat Waheed), Sabin Younis (USA), Sahra Ali (Mushaira). Karachi), Shahida Sardar (Peshawar), Shafqat Hayat (Taxila), Saba Javed (Peshawar), Irfan Amr (Gujranwala), Ghazala Ghazal (Peshawar), Farah Asad (Peshawar), Qudsia Qudsi (Malaysia), Komal Joya (Kabirwala). , Mahmooda Ghazia (Islamabad), Maqsooda Hussain (Rawalpindi), Naseem Nazish (Peshawar) and other female poets presented Hamdiya and Naatiya poetry.

Comments are closed.